منی لانڈرنگ کے خلاف برطانیہ کا بڑا اقدام money laundering
The news is by your side.

Advertisement

منی لانڈرنگ کے خلاف برطانیہ کا بڑا اقدام

لندن : برطانوی حکومت نے کاروباری و دولت مند افراد کےلیے متعارف کروائی گئی گولڈن پلیٹڈ ویزا اسکیم معطل کردی۔

تفصیلات کے مطابق دنیا بھر میں منی لانڈرنگ ، انسانی اسمگلنگ اور دیگر جرائم میں اضافے کے باعث برطانوی حکومت نے گولڈن پلیٹڈویزا اسکیم بند کرنے کافیصلہ کیا تھا۔

برطانوی امیگریشن منسٹر کا کہنا ہے کہ کالے دھن والوں کو برداشت نہیں کیا جائے گا، گولڈن ویزا لینے والوں کو پہلے دولت کی قانونی حیثیت ثابت کرنا ہوگی۔

غیر ملکی میڈیا کا کہنا ہے کہ برطانوی حکومت نے گولڈن ویز اسکیم سے فائدہ اٹھانے والے پاکستانیوں کی فہرست جاری کی ہے۔

گولڈن ویزہ اسکیم حاصل کرنے والے ممالک کی فہرست کے مطابق پاکستان کا چوتھا نمبر ہے، جس کے 62 ارب پتی شہریوں نے 1 ارب 20 کروڑ ڈالر برطانیہ لے جاکر گولڈن ویزہ حاصل کیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ برطانیہ کی جانب سے اٹھایا گیا اقدام منی لانڈرنگ ، انسانی اسمگلنگ و دیگر جرائم کے خلاف آپریشن کا حصّہ ہے۔

برطانوی وزارت امیگریشن کی جانب سے جاری فہرست میں بتایا گیا ہے کہ پڑوسی ملک بھارت سے 76، ایران سے 69، آسٹریلیا54، کینیڈا سے 50 جبکہ صرف گذشتہ برس 1 ہزار چینی و روسی ارب پتیوں نے گولڈن ویزہ اسکیم سے فائدہ اٹھایا تھا۔

مزید پڑھیں : منی لانڈرنگ کی روک تھام کےلیے برطانیہ نے گولڈن ویزہ اسکیم ختم کردی

خیال رہے کہ برطانیہ کی جانب سے گولڈن ویزا اسکیم کو سنہ 2008 میں مالی طور پر مستحکم اور کاروباری شخصیات کےلیے متعارف کروایا گیا تھا۔

گولڈن ویزہ اسکیم کے ذریعے برطانوی شہریت، رہائش اور کاروباری سہولت باآسانی مسیر آتی تھی، عام ویزے کے مقابلے میں گولڈز ویزہ حاصل کرنا نسبتاً آسان تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں