The news is by your side.

Advertisement

"بخارائے شریف” جسے روسی نمائندے کی خواہش پر بند کردیا گیا

بخارا ایک قدیم اور مشہور شہر ہے جسے مختلف ادوار میں حکومتوں کا دارُالحکومت بنایا گیا اور یہ شہر علم و ثقافت کا بھی گہوارہ رہا ہے۔

1920ء میں امارتِ بخارا جس کی موجودہ وسطی ایشیا کے ایک بڑے حصے پر حکم رانی تھی، اس کے خاتمے کے بعد بخارا کی اہمیت بھی کم ہوتی چلی گئی اور اب یہ ازبکستان کا حصّہ ہے۔

پچھلی صدی کی دوسری دہائی میں یہاں پہلی بار فارسی زبان میں اخبار کا اجرا ہوا تھا جس کا نام ‘بخارائے شریف’ تھا۔ وسطی ایشیا کا پہلا فارسی روزنامہ، بخارائے شریف 1912ء میں میرزا جلال یوسف زادہ کے زیرِ ادارت جاری ہوا اور اس کے 153 شماروں کی اشاعت کے بعد روس کے سیاسی نمائندے کے تقاضے پر اگلے ہی سال امیرِ بخارا نے اس اخبار کی اشاعت موقوف کروا دی۔

روزنامے کے مؤسس میرزا محی الدین منصور اور میرزا سراج حکیم تھے۔

اخبار کی تاسیس کا پس منظر
امارتِ بخارا کی قلمرو میں تجدد خواہی و اصلاحات کی تحریک بیسویں صدی کی ابتدائی دو دہائیوں میں روس، ایران، قفقاز، افغانستان، برِ صغیر اور عثمانی سلطنت کی فکری و سیاسی تحریکوں سے متاثر تھی۔ ان مذکورہ علاقوں سے اختر، قانون، حبل المتین، سراج الاخبار، چہرہ نما، وقت، شورا، ترجمان، ملا نصرالدین، اور صراطِ مستقیم جیسے اخبارات، موانع کے باوجود، بخارا کے اصلاح طلبوں کے ہاتھوں تک پہنچتے تھے اور ان اخباروں نے ‘جوان بخارائیان’ نامی تنظیم کی تشکیل اور بیداری میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

ان حالات میں بخارائی دانشوروں نے فیصلہ کیا کہ بخارا کے لوگوں کو دنیا، منطقے اور ملک سے آگاہ کرنے کے لیے اور امارتِ بخارا میں اصلاحات کے اجرا کے لیے لوگوں میں اپنے نظریات اور افکار پھیلانے چاہییں۔ اسی لیے انہوں نے روزنامے کی تاسیس کا قدم اٹھایا۔ بخارائے شریف، بخارائیوں کی جانب سے زبانِ فارسی میں روزنامہ نگاری کا پہلا تجربہ تھا۔

خصوصیات
اس روزنامے میں سیاسی مسائل سے زیادہ اجتماعی مسائل پر بحث ہوتی تھی اور ہر شمارہ ادارتی مقالے (ایڈیٹوریل) کا حامل تھا۔ لیکن خبریں بھی ایک عنصرِ ضروری کے طور پر روزنامے میں اہم جگہ رکھتی تھیں۔ قارئین کے زیادہ تر انتقادی روح رکھنے والے خط بھی روزنامے کے صفحوں پر نشر ہوا کرتے تھے۔ روزنامہ چار صفحوں پر مشتمل تھا اور ہفتے میں چھ بار نشر ہوتا تھا اور عشق آباد، سمرقند اور استنبول وغیرہ میں اس کے خبر نگاروں کا جال تھا۔

فارسی کی اہمیت اور کردار اور اسی طرح دستورِ زبانِ فارسی کی تعلیم کے بارے میں لکھی تحریریں بھی روزنامے کے صفحات پر خصوصی مقام رکھتی ہیں۔ روزنامے کی زبان بخارائی لہجے میں تھی، اور یہ قدیم فارسی اور ایران و افغانستان میں استعمال ہونے والی فارسی کا آمیزہ تھی۔ بخارائی لہجہ فارسی کے لہجوں میں سے ہے اور یہ کابل اور بلخ کے لہجوں سے بیشتر قرابت رکھتا ہے۔

نظریہ و مقصد
روزنامہ امیرِ بخارا کی آمرانہ حاکمیت کی نابودی کے بجائے نظام کی اصلاح کے لیے کوشاں تھا۔ اس لیے روزنامے میں امارت کی انتظامیہ کو اجرائے اصلاحات کی ترغیب دینے اور معاشرے کو قانون پسندی کی جانب لے کر جانے کی مسلسل کوشش کی گئی۔ روزنامہ بخارا کے امورِ تجارت کے روسیوں، یہودیوں اور آرمنیوں کے ہاتھوں میں ہونے کے خلاف رائے رکھتا تھا۔

روزنامے نے زبانِ فارسی کی رشد و پاس داری اور صفحاتِ روزنامہ کے ذریعے دستورِ زبان کی تدریس پر بہت توجہ دی۔ اس میں اکثر اس بحث کو کا سلسلہ بھی جاری رہا کہ قوم کی ترقی اس چیز سے ہوتی ہے کہ وہ اپنے تحریر و کتابت کے تابع کریں، یہ نہ ہو کہ وہ اپنی تحریروں کو عوام النّاس کی بول چال کے تابع کر دیں۔ روزنامے کے لیے سادہ اور مستعمل لیکن معیاری فارسی کو لازم کیا گیا تھا۔

بخارائے شریف کے شمارے اُس وقت کی اجتماعی، سیاسی و ثقافتی صورتِ حال کی قیمتی دستاویز ہیں۔ روزنامہ بخارائے شریف کی ایک بار بندش کے بعد اس کا احیا نہیں‌ کروایا جا سکا تھا اور اس ضمن میں‌ ہر کوشش ناکام ثابت ہوئی۔

(فارسی تحریر سے ترجمہ)

Comments

یہ بھی پڑھیں