The news is by your side.

Advertisement

ایس ایچ او شاہ لطیف ٹاؤن کی گاڑی چوری ہونے کا واقعہ نیا رخ اختیار کرگیا

کراچی: ایس ایچ او شاہ لطیف ٹاؤن کی گاڑی چوری ہونے کا واقعہ نیا رخ اختیار کرگیا، پولیس کے اعلیٰ حکام نے سب انسپکٹر کے پاس کروڑوں روپے مالیت کی گاڑی پر سرجوڑ لئے ہیں۔

اے آر وائی نیوز نے گذشتہ روز شاہ لطیف ٹاؤن کے ایس ایچ او نیک محمد کھوسہ کی گاڑی گھر کے باہر سے غائب ہونے کی خبر بریک تھی، جس کے بعد پولیس کی دوڑیں لگ گئیں۔

بعد ازاں تحقیقات کا آغاز کیا گیا تو اہم انکشافات سامنے آئے، ایس ایچ او نیک محمد کھوسہ اپنی نئی سفید ریو گاڑی چھپانے کے لیے افسران اور میڈیا میں جھوٹ بولتے رہے، ایس ایچ او کی جانب سے پہلےکہا گیا کہ گاڑی چوری ہوئی، بعد اپنا بیان تبدیل کرتے ہوئے کہا کہ گاڑی کو شو روم والے کام سےلےگئے تھے، اب گاڑی مل گئی ہے، گاڑی چوری کا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا۔

یہ بھی پڑھیں: کراچی میں ایس ایچ او کی گاڑی گھر کے باہر سے غائب

ڈی آئی جی نے خود اس معاملے کی تحقیقات کرائیں تو انکشاف ہوا کہ معاملہ ڈکیتی کا ہے، فوری طور پر ایس ایچ او شاہ لطیف ٹاؤن نیک محمد کھوسہ کو فوری طور پر معطل کیا گیا۔

پولیس کے اعلیٰ حکام سر جوڑ کر بیٹھ گئے کہ سب انسپکٹر کے پاس ایک کروڑ کی گاڑی کیسی آئی؟ اس کے تحقیقات شروع کردی گئی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں