The news is by your side.

Advertisement

کرونا وائرس : امارتی شہریوں کا دفتر کے بجائے گھر سے کام کرنے پر اصرار

ابوظبی : کرونا وائرس دنیا بھر میں خوف کی علامت بناہوا ہے، 85 فیصد اماراتی شہریوں نے ہلاکت خیز وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کےلیے ‘ورک فرام ہوم’ کی حمایت کی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق چین سے دنیا بھر میں پھیلنے والے کرونا وائرس نے اب تک ساڑھے چار ہزار کے قریب افراد کو ہلاک کردیا ہے جبکہ 1 لاکھ سے زائد افراد متاثر ہیں، خوف کی علامت بننے والے وائرس سے بچنے کےلیے اماراتی شہریوں نے گھر میں رہ کر کام کرنے زور دیا ہے۔

مقامی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق عوامی رائے شماری سوشل میڈیا فورمز پر کی گئی تھی جس میں 89 فیصد شہریوں نے فیس بک، 84 فیصد نے انسٹاگرام اور 82 فیصد نے ٹوئٹر پر اپنی رائے کا اظہار کرتے ہوئے ورک فرام ہوم کی حمایت کی۔

میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ 17 ہزار 500 افراد نے سوشل میڈیا پر عوامی اظہار رائے میں شرکت کی۔

قدرتی آفات، بحرانوں اور ہنگامی امور کے نگراں قومی ادارے کے ترجمان سیف جمعہ الظاہری نے رائے شماری پر اپنی رائے دیتے ہوئے کہا کہ ‘مختلف اداروں کے تعاون سے ورک فرام ہوم کے بندوبست کی کوششیں جاری ہیں’۔

مختلف کمپنیوں نے اپنے اکاﺅنٹ پر جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ ‘وہ اپنے کارکنان کو ورک فرام ہوم کا موقع دینا مناسب سمجھتی ہیں اور وہ اس کی حوصلہ افزائی کریں گی، بہتر ہوگا کہ ملازمین اس ماحول میں گھروں میں رہ کر کام کریں اور دفاتر نہ جائیں’۔

دنیا بھرمیں کرونا وائرس سے ہلاکتوں کی تعداد 4 ہزار299 ہوگئی

خیال رہے کہ دنیا بھر میں موت باٹنے والے مہلک ترین وائرس کرونا سے متاثرہ افراد کی تعداد 1 لاکھ 14 ہزار سے تجاوز کرچکی ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں