The news is by your side.

Advertisement

بیگم محمد علی جوہر کی وفات

بیگم محمد علی جوہر تحریکِ آزادی کی نام ور خاتون راہ نما تھیں جنھوں نے خواتین کو مسلم لیگ کے پرچم تلے جمع کیا اور خواتین کے دلوں میں آزادی کے جذبے کو اُبھارا۔ وہ ایک نڈر اور سمجھ دار خاتون تھیں جنھوں نے اس وقت کی سیاست میں‌ اپنا کردار بخوبی نبھایا۔ ہندوستان کی جدوجہدِ آزادی کی یہ خاتون راہ نما 1947ء میں وفات پاگئی تھیں۔

28 مارچ کو دنیا سے رخصت ہوجانے والی بیگم محمد علی جوہر کا اصل نام امجدی بانو تھا۔ وہ 1885ء میں ریاست رام پور میں پیدا ہوئی تھیں۔ وہ 5 فروری 1902ء کو ہندوستانی مسلمانوں کے خیر‌خواہ اور آزادی کے متوالے اور تحریکِ‌ خلافت کے راہ نما مولانا محمد علی جوہر سے رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئیں۔

1919ء میں جب مولانا محمد علی جوہر کو تحریکِ‌ خلافت کے حوالے سے جیل بھیجا گیا تو بیگم محمد علی جوہر میدانِ عمل میں اتریں۔ اسی برس انہیں خود بھی قید و بند کی صعوبت بھی برداشت کرنی پڑی۔ رہائی کے بعد وہ عملی سیاست میں مکمل طور پر فعال ہوگئیں اور 1931ء میں مولانا محمد علی جوہر کی وفات کے بعد سیاسی میدان میں ان کی نیابت کرنے لگیں۔

23 مارچ 1940ء کو آل انڈیا مسلم لیگ کے سالانہ اجلاس میں انہوں نے ہندوستان کی مسلمان خواتین کی جانب سے قرار دادِ لاہور کی تائید میں تقریر کی۔ وہ آل انڈیا مسلم لیگ کی پہلی راہ نما تھیں جنہوں نے اس قرار داد کو قرار دادِ پاکستان کا نام دیا۔ ہندوستانی پریس نے طنز کے طور پر اس نام کو ایسا اچھالا کہ لفظ پاکستان زبان زدِ خاص و عام ہو گیا اور 14 اگست 1947ء کو ہندوستان کے مسلمانوں نے اپنی طویل جدوجہد سے جو وطن حاصل کیا اس کا نام پاکستان رکھا گیا۔

مسلم لیگ کے تمام بڑے بڑے راہ نما اور خاص طور پر قائد اعظم محمد علی جناح اُن کی بے حد عزّت کرتے تھے اور اُن کی تجاویز اور آرا کو اہمیت دیتے تھے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں