The news is by your side.

Advertisement

دنیا بھر میں لاکھوں افراد کو موت کے گھاٹ اتارنے والا مہلک انفیکشن

حال ہی میں ہونے والی ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ اینٹی بائیوٹک مزاحمتی جراثیم جسے سپر بگ کہا جاتا ہے، کی وجہ سے ایک سال میں عالمی سطح پر 12 لاکھ اموات ہوئی ہیں، سپر بگ نے دنیا کے مہلک انفیکشنز کی فہرست میں جگہ بنا لی ہے۔

میڈیکل جنرل لانسٹ میں شائع نئی تحقیق میں پیش کی گئی اموات کا اندازہ مکمل نہیں ہے بلکہ ایک کوشش ہے جس میں ان ممالک کا جنہوں نے کم ڈیٹا دیا یا ڈیٹا نہیں دیا، خلا پر کیا گیا ہے۔

عالمی ادارہ صحت نے کئی سال پرانی ایک رپورٹ کا حوالہ دیا جس میں بتایا گیا تھا کہ سپر بگ کی وجہ سے عالمی سطح پر اندازاً کم از کم 7 لاکھ اموات ہوں گی، ہیلتھ آفیشلز نے اس بات کا اعتراف کیا کہ کئی ممالک کی جانب سے بہت کم معلومات ہے۔

اینٹی مائیکروبائیل مزاحمت تب ہوتی ہے جاب بیکٹیریا اور فنگائی جیسے جراثیم اتنے طاقتور ہوجاتے ہیں کہ ان ادویات سے لڑیں جنہیں ان جراثیم کو مارنے کے لیے بنایا ہوتا ہے۔

یہ مسئلہ نیا نہیں ہے لیکن اس کی جانب توجہ اب اس لیے زیادہ ہو گئی ہے کیوں کہ ان جراثیم سے لڑنے کے لیے نئی ادویات نہیں ہیں۔

عالمی ادارہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ یہ نئی تحقیق ادویات کے مزاحمتی جراثیم کے اندر موجود خطرے کو واضح طور پر دکھا رہی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں