The news is by your side.

Advertisement

معمر شخص کو دل کا دورہ پڑنے پر جدید ڈرون نے کیسے جان بچائی؟

ٹرالہیٹن: سویڈن میں جدید ترین ڈرون نے دل کا دورہ پڑنے پر ایک 71 سالہ شخص کی جان بچانے میں حیرت انگیز طریقے سے مدد کی۔

سویڈین کے شہر ٹرالہیٹن میں اپنے گھر کے باہر ایک معمر شخص کو برف ہٹانے کے دوران اچانک دل کا دورہ پڑ گیا، یہ دورہ جان لیوا ثابت ہو سکتا تھا، لیکن ایک خود کار ڈرون نے بروقت انھیں الیکٹرک شاک (defibrillator) پہنچایا، جس کی وجہ سے ان کی جان بچ گئی۔

یہ جدید ڈرون بنانے والی کمپنی ایورڈرون کا کہنا ہے کہ ایمبولینس کی آمد سے پہلے ڈیفیبریلیشن شروع کی جا سکتی ہے، جس کے لیے ڈرون کے اندر ایمرجنسی میڈیکل ایریل ڈیلیوری سروس (EMADE) کی سہولت رکھی گئی ہے۔

جان بچنے کے بعد 71 سالہ مریض نے بتایا کہ میں الفاظ میں بیان نہیں کر سکتا کہ میں اس نئی ٹیکنالوجی اور ڈیفیبریلیٹر کی تیزی سے فراہمی کے لیے کتنا شکر گزار ہوں، اگر یہ ڈرون نہ ہوتا تو شاید میں یہاں نہ ہوتا۔

واقعے کے وقت اس علاقے سے گزرنے والے شہری ڈاکٹر مصطفیٰ علی نے بتایا کہ میں مقامی اسپتال میں اپنی جاب پر جا رہا تھا، جب میں نے کار کی کھڑکی سے باہر دیکھا اور ایک شخص کو اپنے ڈرائیو وے میں گرا ہوا دیکھا، میں فوراً سمجھ گیا کہ کچھ گڑبڑ ہے اور مدد کے لیے پہنچ گیا۔

ڈاکٹر نے مزید بتایا کہ اس آدمی کی نبض ڈوب رہی تھی، اس لیے میں نے سی پی آر (کارڈیو پلمونری ری سسیٹیشن) کرنا شروع کر دیا جب کہ ایک اور ساتھی کو ایمرجنسی نمبر پر کال کرنے کو کہا، چند ہی منٹ بعد میں نے اپنے سر کے اوپر سے کچھ اڑتے دیکھا، وہ ڈرون تھا، ڈیفیبریلیٹر کے ساتھ۔

مریض، جو اب مکمل طور پر صحت یاب ہو چکا ہے، کا کہنا تھا کہ یہ واقعی ایک انقلابی ٹیکنالوجی ہے جسے ہر جگہ استعمال میں لانے کی ضرورت ہے۔

یہ ڈرون سویڈن کی سب سے بڑی میڈیکل یونیورسٹی کیرولنسکا انسٹیٹیوٹ کے ساتھ ساتھ نیشنل ایمرجنسی آپریٹر SOS الارم، ریجن واسٹرا گوٹالینڈ اور ایورڈرون کے درمیان شراکت میں تیار کیا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں