The news is by your side.

Advertisement

مظاہرے روکنے والی فرانسیسی پولیس خود سڑکوں پر نکلنے پر مجبور

پیرس : فرانسیسی پولیس اپنے مطالبات کےلیے سڑکوں پر نکلنے پر مجبور ہوگئی ہے، بدھ کو بستی کے مقام سے پندرہ ہزار پولیس اہلکاروں نے جلوس نکالا۔

تفصیلات کے مطابق فرانس کی پولیس پیرس میں پیلی جیکٹ کے مسلسل 46ویں ہفتے جاری مظاہروں سے تنگ آگئی ہے اور انہوں نے 2 اکتوبر کو مارچ کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم مسلسل 18 گھنٹے ہیلمٹ ، بلٹ پروف جیکٹ پہنے پانی کی ایک بوتل کے ساتھ ڈیوٹی کرتے ہیں جس کے باعث ہم جسمانی اور نفسیاتی تھکاوٹ کے علاوہ ہفتہ وار چھٹی کے دونوں میں بھی بچوں کو وقت نہیں دے سکتے۔

پولیس کی اکثریتی یونین الائنس کا کہنا تھاکہ پیلی جیکٹ کے مسلسل ہر ہفتے مظاہرے ان کے لیے سر درد اور ایک بہت بڑی تھکاوٹ ہے،ہم چاہتے ہیں کہ یہ مظاہرے رک جائیں کیونکہ ان حالات اور صورتحال کے باعث پولیس افسران میں خودکشیوں کا رجحان بڑھ رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں 18 گھنٹے نان اسٹاپ ڈیوٹی کرنا پڑ رہی ہے اور چھٹیوں کے روز بھی صبح 6:30 بجے سے شام ساڑھے 10بجے تک کے واقعات کے دوران متحرک رہنا پڑتا ہے۔

پولیس کی اکثریتی یونین الائنس کا کہنا تھاکہ ہمارے سر پر ہیلمیٹ ہوتا ہے، بلٹ پروف جیکٹ اور ان 18 گھنٹوں کے لیے صرف ایک ٹوکری کھانا آتا ہے جس میں ایک منرل واٹر کی بوتل ہوتی ہے اور اسی سے سارا دن گزارا کرنا پڑتا ہے جو کہ انتہائی مشکل زندگی ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں