The news is by your side.

Advertisement

’پی ڈی ایم کے پشاور جلسے میں 250 افراد نے شرکت کی‘

پشاور: خیبرپختون خواہ حکومت کے ترجمان کامران بنگش نے پی ڈی ایم میں شامل 25 جماعتیں صرف 250 لوگوں کو ہی جمع کرسکیں۔

پشاور میں پی ڈی ایم کی جانب سے منعقدہ ریلی مہنگائی کے خلاف ریلی کا انعقاد کیا گیا، جس سے جے یو آئی کے سربراہ مولانا فضل الرحمان، شاہد خاقان عباسی سمیت دیگر رہنماؤں نے خطاب کیا۔

مولانا فضل الرحمان نے مہنگائی کا ذمہ دار تحریک انصاف کی حکومت کو قرار دیا اور کہا کہ آج غریب کا زندہ رہنا مشکل ہوگیا ہے، مالیاتی اداروں کو گروی رکھ کر قرض حاسل کیا جارہا ہے‘۔

پی ڈی ایم کے پروگرام پر ردعمل دیتے ہوئے خیبرپختون خواہ حکومت کے ترجمان کامران بنگش نے دعویٰ کیا کہ ’پی ڈی ایم میں شامل 25 جماعتیں ایک ماہ کی محنت کے باوجود پشاور میں صرف 250 افراد کا جلسہ کرسکیں‘۔

انہوں نے کہاکہ خیبرپختون خواہ کےعوام وزیر اعظم عمران خان اور وزیراعلیٰ کی قیادت پر اعتماد کرتے ہیں، اس لیے پی ڈی ایم کو اب جلسے کے لیے لوگ بھی نہیں مل رہے، حکومت نے اپنی مدت پوری کی تو اپوزیشن کو خیبرپختون خواہ سے امیدوار بھی نہیں مل سکیں گے۔

کامران بنگش نے کہا کہ فلاپ شونے پی ڈی ایم کی غیرمقبولیت بے نقاب کردی،  خیبرپختون خواہ کی سیاست میں کرپٹ اورلٹیروں کی کوئی جگہ نہیں، اس لیے عوام ایسے عناصر کو مسترد کررہے ہیں، عوام نےاپوزیشن کےکےپی سےاحتجاج کرنےکاخواب چکناچورکردیا۔

دوسری جانب مسلم لیگ ن کے نائب صدر شاہد خاقان عباسی نے دعویٰ کیا کہ انتظامیہ نے راستے بند کر کے عوام اور کارکنان کو جلسے میں شرکت سے روکا، ایسے ہتھکنڈے پی ڈی ایم کو پیچھے نہیں ہٹا سکتے، یہ وہ واحد پلیٹ فارم ہے جہاں سے عوام کے لیے آواز اٹھائی جاتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ خیبرپختون خواہ میں گیس کی پیداوار ہوتی ہے مگر یہاں کے عوام اس نعمت سے محروم ہیں، جس ملک میں عوام اور ووٹ کی عزت نہ ہو وہ کامیاب نہیں ہوتا۔

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ نے پشاور میں ہونے والے پروگرام کو کامیاب قرار دیتے ہوئے اسے حکومت کے خلاف ریفرنڈم قرار دیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں