The news is by your side.

Advertisement

امریکی انتخابات، نصف فیصد مسلمان امیدوار کامیاب

واشنگٹن: امریکا کے صدارتی انتخابات میں حصہ لینے والے 110 میں سے 57 مسلمان امیدوار کامیاب ہوگئے۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹ کے مطابق اسلامی تعلقات کے لیے بنائے جانے والے مرکزی ادارے (کاؤنسل آن امریکن اسلامک ریلیشن) ، جیٹ پیاک اور ایم پی پاؤر چینج کی جانب سے کامیاب ہونے والے امیدواروں کو مبارک باد دی گئی۔

سی اے آئی آر  کی جانب سے جاری ہونے والے اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ امریکا میں ہونے والے صدارتی انتخابات میں 110 مسلمان امیدواروں نے حصہ لیا جن میں سے نصف سے زیادہ کامیاب قرار پائے ہیں۔

اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ اتنی بڑی تعداد میں مسلمان امیدواروں کا انتخابات میں حصہ لینا اور کامیابی حاصل کرنا امریکا کی سیاست میں نمایاں تبدیلی ہے۔

رپورٹ کے مطابق امریکا کی چوبیس ریاستوں اور واشنگٹن ڈی سی سے 110 مقامی مسلم امیدواروں نے مختلف عہدوں کے لیے انتخاب لڑا، اس سے قبل اتنی بڑی تعداد میں مسلم امیدوار انتخابی میدان میں نظر نہیں آئے تھے۔

مزید پڑھیں: امریکا کی نئی خاتون اول کون ہیں؟

یہ بھی پڑھیں: جوبائیڈن: محنت کش کا ’ہکلا بچہ‘ امریکا کا صدر

انتخابات میں کامیاب ہونے والے 57 میں سے 7 امیدوار اُن ریاستی عہدوں پر منتخب ہوئے جن پر اس سے قبل کبھی کوئی مسلمان امیدوار کامیاب نہیں ہوا تھا۔

سی اے آئی آر اور جیٹ پیاک کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر محمد مسوری کا کہنا تھا کہ ’امریکا میں مسلمانوں کی سیاسی نمائندگی میں اضافہ ہونا خوش آئند اور بڑی تبدیلی ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ ’اگر اسی طرح مسلمان امیدوار کامیاب ہوتے رہے تو ہم پرتشدد اسلامو فوبیا کے حوالے سے پیدا ہونے والے تاثر کو ختم کرنے میں کامیاب ہوجائیں گے کیونکہ منتخب ہونے والے مسلم اراکین اسمبلی فلور میں کھڑے ہوکر تمام غلط فہمیوں کو دور کرسکتے ہیں‘۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ریاستی انتخابات میں 11 مسلمان خواتین ماری ٹرنر، مدینہ ویلسن، اینٹن، امام جودہ، سامبا بالدہ، کریس بنجامن، فادی قدورہ، ہودھان حسن، محمد نور، عمر فتح، ابراہیم عائشہ اور زہران ممدانی بھی کامیاب ہوئی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں