The news is by your side.

Advertisement

کپیٹل ہل ہنگامہ : نینسی پلوسی اور ہیِلری کلنٹن کا روسی صدر پر بڑا الزام

واشنگٹن : امریکی پارلیمنٹ کی اسپیکر نینسی پلوسی اور ہیِلری کلنٹن نے امریکی پارلیمنٹ میں ہنگامہ آرائی میں روسی صدر کے ملوث ہونے کا الزام عائد کیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق ڈیموکریٹک بیگ وگز ہیِلری کلنٹن اور نینسی پلوسی نے روسی صدر ولادیمیر پوتن کی جانب سے امریکی دارالحکومت میں فسادات میں کردار ادا کرنے پر شفاف تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

ان دونوں امریکی شخصیات نے روسی صدر پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ روسی صدر نے ذاتی طور پر امریکی درالحکومت میں فسادات اور کانگریس پر حملے کا حکم دیا جس سے پوری دنیا میں امریکا کی جگ ہنسائی ہوئی۔

امریکی ایوان اسپیکر نے پوڈ کاسٹ پر2016 کی ناکام امریکی صدارتی امیدوار ہیلری کلنٹن کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو کیا جہاں انہوں نے ماہ جنوری کے شروع میں واشنگٹن ڈی سی میں فسادات افراتفری اور امریکی کانگریس پر حملے بارے تبادلہ خیال کیا۔

اپنے انٹرویو میں ہیلری کلنٹن کا کہنا تھا کہ 6جنوری کو ہونے والے دارالحکومت فسادات کی تحقیقات کے لئے نائن الیون طرز کا کمیشن بنایا جائے، انہوں نے الزام عائد کیا کہ ڈونلڈ ٹرمپ اپنے دور حکومت میں کسی دوسرے ایجنڈے پر کام کررہے تھے۔

ہاؤس اسپیکر نینسی پیلوسی سے اپنے پوڈ کاسٹ ” یو اینڈ می بوتھ ” پر گفتگو کرتے ہوئے ہیلری کلنٹن نے شک کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پارلیمان میں ہنگامہ آرائی کی تحقیقات میں ڈونلڈ ٹرمپ کا فون ریکارڈ بھی چیک کیا جائے کہ وہ روسی صدر سے رابطے میں تھے یا نہیں ۔

گفتگو کے دوران ایک موقع پر ہیلری کلنٹن نے استدلال کیا کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے پاس دوسرے ملک کے ایجنڈے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ تاہم بدقسمتی سے مجھے نہیں لگتا کہ ہمیں ابھی تک ٹرمپ کے ان ایجنڈوں کا علم ہے لہٰذا ہم نہیں جانتے کہ ٹرمپ کے وہ ایجنڈے کیا ہیں۔ ہیلری کلنٹن کا کہنا تھا کہ مجھے اس بات کی حیرت ہے کہ ٹرمپ کی ڈور کون کھینچتا ہے۔

ہیلری کلنٹن جوسال 2016 کے انتخابات میں ٹرمپ سے ہار گئی تھیں نے کہا کہ یہ واضح ہے کہ ان کے سابق حریف کی جمہوریت سے نفرت واضح ہے ۔

Comments

یہ بھی پڑھیں