The news is by your side.

ایران نے خلیج میں امریکی ڈرون کو قبضے میں لے کر چھوڑ دیا

تہران: ایران نے خلیج میں امریکی ڈرون کو قبضے میں لے کر چھوڑ دیا۔

غیر ملکی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق امریکی حکام کا کہنا ہے کہ پیر اور منگل کی درمیانی رات کو خلیج فارس میں ایران کے اسلامی انقلابی گارڈ کور (IRGC) نے ایک امریکی سمندری ڈرون کو قبضے میں لینے کی کوشش کی۔

امریکی حکام کے مطابق جب امریکی بحریہ کے جنگی جہاز اور ہیلی کاپٹر حرکت میں آ گئے تو ایران نے ڈرون کو چھوڑ دیا۔

امریکی میڈیا کے مطابق امریکی بحریہ کے ایک سینیئر کمانڈر نے واقعے کو ’شرمناک‘ اور ’بلاجواز‘ قرار دے دیا ہے۔

رپورٹس میں کہا گیا ہے کہ یہ پہلا واقعہ ہے کہ امریکی بحریہ کے مشرق وسطیٰ میں قائم 5 ویں بیڑے کی نئی ڈرون ٹاسک فورس کو ایران نے نشانہ بنانے کی کوشش کی ہے۔

اگرچہ ڈرون پکڑنے کا واقعہ کسی ناخوش گوار نتیجے پر ختم نہیں ہوا، تاہم یہ واقعہ امریکا اور ایران کے درمیان بڑھتی کشیدگی کے دوران پیش آیا ہے، دونوں ممالک کے درمیان جوہری معاہدے پر بات چیت کا سلسلہ تاحال معلق ہے۔

5 ویں بحری بیڑے کے ترجمان کمانڈر ٹموتھی ہاکنز نے بتایا کہ انقلابی گارڈز کے جنگی جہاز شاہد بازیار نے پیر کی رات دیر گئے بین الاقوامی پانیوں میں خلیج کے وسطی حصے میں امریکی سیل ڈرون ایکسپلورر سے ایک لائن منسلک کی، اور اسے کھینچنا شروع کر دیا، یہ سیل ڈرون سمندر کی دور سے نگرانی کے لیے کیمرے، ریڈار اور سینسر کا حامل ہے۔

انھوں نے کہا کہ بحریہ کی ساحلی گشتی کشتی USS تھنڈربولٹ اور ایک MH-60 سی ہاک ہیلی کاپٹر فوراً انقلابی گارڈز کے جہاز کے تعاقب کے لیے حرکت میں آ گئے، بحریہ نے شاہد بازیار کو ریڈیو کے ذریعے کال کر کے بتایا کہ ڈرون امریکی ہے، جس کے بعد ایرانی جہاز نے ڈرون کو چھوڑ دیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں