The news is by your side.

Advertisement

بلوچ طلبہ پر تشدد، اسلام آباد ہائیکورٹ نے نسلی پروفائلنگ ناقابل برداشت قرار دے دی

اسلام آباد: اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاقی وزیر شیری مزاری کی بیٹی وکیل ایمان مزاری کی جانب سے دائر درخواست پر تحریری حکم نامہ جاری کر دیا، عدالت نے بلوچ طلبہ پر تشدد کے حوالے سے نسلی پروفائلنگ ناقابل برداشت قرار دے دی۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ایمان مزاری کی درخواست پر سماعت کے بعد تحریری حکمنامہ جاری کر دیا، عدالت میں اسلام آباد ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر محمد شعیب شاہین عدالت میں پیش ہوئے۔

عدالت کے تحریری حکم نامے کے مطابق شعیب شاہین نے نیشنل پریس کلب کے باہر صوبہ بلوچستان سے تعلق رکھنے والے طلبہ کی جانب سے لگائے گئے کیمپ کا دورہ کیا تھا، انھوں نے محسوس کیا کہ وفاق کی طرف سے انھیں نظر انداز کرنے کے علاوہ انھیں نگرانی اور نسلی پروفائلنگ کا نشانہ بھی بنایا جا رہا ہے۔

عدالت کے مطابق سیکریٹری وزارت انسانی حقوق انعام اللہ خان نے بتایا کہ واقعے پر مقامی انتظامیہ سے رپورٹ طلب کی گئی تھی، کیوں کہ پہلی نظر میں طاقت کا استعمال حد سے زیادہ تھا، عدالت میں چیف کمشنر عامر علی احمد، آئی جی احسن یونس، انسپکٹر جنرل آف پولیس کے ساتھ پیش ہوئے، آئی جی نے یقین دہانی کرائی ہے کہ معاملے کی جانچ کی جائے گی اور مناسب کارروائی کی جائے گی۔

حکم نامے کے مطابق اٹارنی جنرل نے کہا کہ وہ ذاتی طور پر اس معاملے کو دیکھیں گے اور اس کے مطابق وفاقی حکومت اور اسلام آباد انتظامیہ کو مشورہ دیں گے۔

ایمان مزاری اور بلوچ طلبہ کے خلاف غداری کے مقدمے پر اسلام آباد ہائیکورٹ کا سخت فیصلہ

عدالتی حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ صوبہ بلوچستان سے تعلق رکھنے والے طلبہ کئی دنوں سے نیشنل پریس کلب کے سامنے پرامن احتجاج کر رہے ہیں، عدالت کو بتایا گیا کہ احتجاجی کیمپ کا مقصد وفاقی حکومت کو بلوچستان سے ایک طالب علم کی مبینہ طور پر جبری گمشدگی کی طرف متوجہ کرانا تھا، اور اس بات سے انکار نہیں کیا گیا کہ کسی عہدیدار یا کابینہ کے کسی رکن نے ان نوجوان شہریوں تک پہنچنے کی کوشش نہیں کی۔

مزید کہا گیا کہ ایف آئی آر کے مندرجات سے ظاہر ہوتا ہے کہ کئی دنوں تک پرامن احتجاج کرنے کے باوجود طلبہ کو منتشر کرنے اور ان کے کیمپ کو اکھاڑ پھینکنے کے لیے ضرورت سے زیادہ طاقت کا استعمال کیا گیا، تیل اور معدنیات سے مالا مال صوبہ بلوچستان پاکستان کے تقریباً 44% رقبے پر مشتمل ہے، یہ ملک کے سب سے کم ترقی یافتہ اضلاع پر مشتمل ہے، اور بلوچستان کے باسیوں کی قربانیاں اور ان کی حب الوطنی شک و شبہ سے بالاتر ہے، لیکن اس میں کوئی اختلاف نہیں کہ گزشتہ 7 دہائیوں کے دوران غلط پالیسیوں اور خراب طرز حکمرانی نے شکایات کو جنم دیا ہے، جنھیں وفاقی حکومت نظر انداز نہیں کر سکتی۔

تحریری فیصلے میں عدالت نے کہا یہ بتانا ستم ظریفی اور پریشان کن ہے کہ بلوچستان کے نوجوان طلبہ محسوس کرتے ہیں کہ انھیں عوامی سطح پر نظر انداز کیا جا رہا ہے، وفاقی حکومت کی نمائندگی کرنے والے عوامی کارکنوں کی بے حسی سے ایسا لگتا ہے کہ اسلام آباد انتظامیہ نے ایسے تاثرات پیدا کیے ہیں، یہ نوٹ کیا جاتا ہے کہ نسلی پروفائلنگ کا تصور انتہائی خراب اور ناقابل دفاع ہے، پاکستان میں اسے برداشت نہیں کیا جا سکتا، جو کہ آئین کے تحت چل رہا ہے۔

عدالت نے حکم دیا کہ وفاقی حکومت غیر معمولی دیکھ بھال اور ہمدردی کا مظاہرہ کرے، تاکہ بلوچستان کے باشندوں خاص طور پر اس کے نوجوانوں کے کسی بھی اندیشے یا تاثر کو دور کیا جا سکے، لیکن وفاقی حکومت اس بھاری ذمہ داری میں ناکام نظر آتی ہے، وفاقی حکومت کی سربراہی ایک منتخب وزیر اعظم کرتی ہے، عدالت توقع کرتی ہے کہ وزیر اعظم اور وفاقی حکومت بلوچستان سے تعلق رکھنے والے طلبہ تک پہنچ کر ان کی شکایات سنیں گے۔

عدالت نے یہ حکم بھی دیا کہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کی طرف سے نسلی طور پر پیش کیے جانے کے خدشات یا تاثر کو دور کرنے کے لیے فوری اقدامات کیے جائیں، بلوچستان سے تعلق رکھنے والے طلبہ کو اب آئین کے تحت ان کے حقوق کی ضمانت دی گئی ہے، ان کی آواز کو دبائے جانے یا ان کے ساتھ قانون کے مطابق سلوک کیے جانے کی وجہ سے وہ غمگین محسوس کریں گے، عدالت نے لوگوں کو ہراساں کرنے یا گرفتار کرنے سے روک دیا ہے۔

حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ عدالت نے آئندہ سماعت تک حکم امتناع توسیع کر دی، آئندہ سماعت تک ایف آئی آر نمبر 203 پر کسی کو گرفتار نہیں کیا جائے، نیز عدالت نے کیس پر مزید سماعت 21 مارچ تک کے لیے ملتوی کر دی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں