فلسطینی خاندان کو زندہ جلانے والا درندہ صفت اسرائیلی رہا: Palestinian
The news is by your side.

Advertisement

فلسطینی خاندان کو زندہ جلانے والا درندہ صفت اسرائیلی رہا

تل ابیت: فلسطین میں ایک خاندان کو زندہ جلانے والا درندہ صفت اسرائیلی شخص کو عدالت نے رہائی دے دی۔

تفصیلات کے مطابق 2015 میں ایک فلسطینی خاندان کو فلسطین کے علاقے نابلس میں اسرائیلی شخص نے گھر میں بند کر کے زندہ جلا دیا تھا جس کے نتیجے میں میاں، بیوی اور ایک بچہ موقع پر ہی شہید ہوگئے تھے۔

اسرائیل کی مقامی عدالت نے اس قتل جیسے سنگین واردات میں ملوث ہونے کے باوجود اسرائیلی شخص کو رہائی دے دی تاہم اس کے گھر کو سب جیل قرار دیا گیا ہے جہاں وہ قید رہے گا۔


فلسطینی مظاہرین پر اسرائیلی افواج کی فائرنگ،1 نوجوان شہید


رہائی پانے والا دہشت گرد سعد، اس کی اہلیہ اور ایک شیر خوار بیٹے کو گھر میں زندہ جلا کر شہید کرنے میں ملوث ہے، عدالت نے حکم دیا ہے کہ قاتل کو رہائی کے بعد گھر میں رکھا جائے تاہم اسے ہر ممکن سہولیات فراہم کی جائیں۔

دوسری جانب مذکورہ خاندان کے دیگر افراد کا کہنا ہے کہ قاتل کی رہائی پر گہرا دکھ اور افسوس ہے، بے گناہ فلسطینی شہریوں کو  زندہ جلانے میں ملوث عناصر کو رہا کرنا دہشت گردی کی پشت پناہی کرنے کے مترادف ہے۔


اسرائیلی افواج کی فائرنگ، 2 فلسطینی نوجوان شہید، 300 سے زائد زخمی


ان کا مزید کہنا تھا کہ قاتل کی رہائی صہیونی ریاست کے مجرموں اور قاتلوں کو تحفظ دینے اور جرائم کی حوصلہ افزائی کرنے کے بھی  مترادف ہے، مجرم کو قرار واقعی سزا ملنی چاہیے۔

خیال ہرے کہ ایک جانب اسرائیلی عدالت بددیانتی پر مبنی فیصلے کر رہی ہے تو دوسری جانب اسرائیلی فوجیوں نے بھی فلسطین میں جارحیت کی انتہا کر دی ہے، اور آئے دن نہتے فلسطینیوں کو شہید کر دیا جاتا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں