The news is by your side.

Advertisement

روشنیوں کا شہر، اندھیرے میں ڈوب گیا

کراچی: حکومتی غفلت اور سیاسی اختلافات نے شہر قائد کو کھنڈر بنا دیا، عوام کی زندگی اجیرن ہوگئی.

تفصیلات کے مطابق کچرے کے ڈھیر، ٹوٹی پھوٹی سڑکیں اور پانی کا بحران عوام کا نصیب بن گیا، رہی سہی کسر طوفانی بارشوں نے پوری کر دی.

بارشوں کے بعد شہر کی حالت ابتر ہے. برساتی نالوں سے کچرا اٹھانے کا کام روایتی سست روی کا شکار ہے.

کئی سڑکیں پوری طرح تباہ ہوچکی ہیں، قدم قدم پر موجود گڑھوں کی وجہ سے گاڑیوں‌ کا گزرنا دشوار ہے.

ان ٹوٹی پھوٹی، ناہموار سڑکوں کی وجہ سے حادثات کا خدشہ بھی رہتا ہے اور ذرا سی تیز رفتاری کسی بڑے حادثے کا سبب بن سکتی ہے.

جامعہ کراچی شہر کی پہنچا ہے، اس درس گاہ کی سمت آنے والا یونیورسٹی روڈ جگہ جگہ سے ادھڑ گیا، حالاں کہ اس پر  کچھ ہی عرصے قبل  ایک ارب روپے خرچ کیے گئے تھے.

نارتھ ناظم آباد، جو کبھی پوش علاقہ تصور کیا جاتا تھا، ان کی سڑکوں پر گڑھوں کی بھرمار ہے، ترقیاتی منصوبے تاخیر کے شکار ہونے کے باعث بھی عوام شدید پریشان ہیں.

مزید پڑھیں: ہوشیار! کراچی میں ایک بار پھر بارش کی پیشگوئی

سب سے برا حال سائٹ ایریا کا ہے. شہر کا صنعتی علاقہ مسائل کا گڑھ بن چکا ہے. انفرا اسٹرکچرتیزی سے تباہی کی جانب گامزن ہے.

جگہ جگہ کوڑے کے ڈھیر لگے ہیں، سڑکوں‌پر سیوریج کا پانی کھڑا ہے، جس کی وجہ سے ٹریفک سست روی کا شکار رہتی ہے.

ادھر نشیبی علاقوں میں اب بھی بارش کے پانی کی باقیات موجود ہیں، جس کی وجہ سے مختلف بیماریاں جنم لے رہی ہیں.

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں