The news is by your side.

Advertisement

موٹر کار: نکولس جوزف کی انجنیئرنگ سے رابرٹ اینڈرسن کی ذہانت تک

دنیا کی پہلی موٹر کار کے موجد کا نام‌ ‘نکولس جوزف کگنوٹ’ تھا جو فرانس کا باشندہ تھا۔ اس کی ایجاد کا چرچا 1799ء میں ہوا۔ وہ فوج میں انجنیئر تھا۔ اس نے بھاپ سے چلنے والی جو گاڑی تیّار کی تھی وہ بھاری اور سست رفتار تھی۔ اس گاڑی کے تین پہیے تھے۔ یہ گاڑی آج بھی ایک عجائب گھر میں محفوظ ہے۔

1885ء میں کارل بینز نے دنیا کو حیران کردیا اور ایک ہارس پاور کے انجن سے توانائی حاصل کرنے والی گاڑی تیّار کرلی۔ جرمنی کے کارل بینز کی ایجاد کردہ گاڑی میں تین آدمیوں کے بیٹھنے کی گنجائش تھی اور اس کے تین پہیے تھے۔

یہ پہلی آٹو موبائل کار کہلاتی ہے۔ کارل بینز ہی نے چار پہیوں والی پہلی کار 1889ء میں بنائی۔ مشہورِ زمانہ لگژری کار مرسڈیز بھی کارل بینز نے بنائی تھی جس کے بعد مختلف کمپنیاں قائم ہوئیں‌ اور کاریں بنانے کا سلسلہ شروع ہوا۔ تاہم بھاپ کے انجن کی تیّاری، ریل گاڑی اور موٹر کاروں کے حوالے سے اٹھارہویں‌ صدی عیسوی میں متعدد انجینئروں نے ایسے کئی تجربات کیے کہ موٹر کاروں کے لیے کسی ایک کی ایجاد کو اوّلین کہنا کچھ مشکل ہوگیا۔ الغرض دنیا کی کسی بھی دوسری ایجاد کی طرح موٹر کار نے بھی رفتہ رفتہ ترقی کی۔

پچھلی دو صدیوں‌ کے مقابلے میں‌ جب انسان نے زیادہ وسائل، قسم قسم کی ٹیکنالوجی اور سہولیات حاصل کرلی ہیں، تو اس کا شوق اور معیارِ زندگی بھی تبدیل ہوا اور آج جدید و خود کار اور سفر کے اعتبار سے نہایت آرام دہ کاریں سڑکوں پر نظر آتی ہیں۔ یہ نت نئے ڈیزائن کی حامل، آرام دہ اور تیز رفتار کاروں کا زمانہ ہے۔ ہر گاڑی کا اب ایک کے بعد دوسرا نمونہ یا ماڈل آتا ہے اور زیادہ تر خریدار نئے ماڈل کی گاڑی خریدنا چاہتے ہیں۔

کئی برس قبل بھاپ سے چلنے والی موٹر کار کے بعد دنیا کو پیٹرول سے چلنے والی کار ملی تھی اور آج کے دور میں الیکٹرک کار بھی ایجاد ہوچکی ہے۔ بجلی سے چلنے والی دنیا کی پہلی کار کے موجد کا نام رابرٹ اینڈرسن ہے اور ناروے وہ ملک ہے جس کے دارالحکومت اوسلو میں سب سے زیادہ الیکٹرک کاریں موجود ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں