بلیک ہول کا معمہ حل کرنے والی حیرت انگیز شے ایجاد کرلی گئی -
The news is by your side.

Advertisement

بلیک ہول کا معمہ حل کرنے والی حیرت انگیز شے ایجاد کرلی گئی

سائنس جاننے اور مسلسل جانتے رہنے کا نام ہےاور یہی اس علم کی کامیابی کا راز بھی ہے کہ اس میدان میں سرگرمِ عمل افراد کبھی شکست تسلیم نہیں کرتے بلکہ جہدِ مسلسل میں مصروف رہتے ہیں‘ کئی سال کی لگاتار جدوجہد کے بعد سائنسدان منفی کمیت کا حامل مادہ تخلیق کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں جس سے بلیک ہول اور دیگر غیرمرئی طاقتوں کو سمجھنے میں مدد ملے گی۔

ﻣﺎﮨﺮﯾﻦِ ﻃﺒﯿﻌﯿﺎﺕ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﺳﯿﺎﻝ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﯽ ﮐﻤﯿﺖ ﻣﻨﻔﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺍﺳﮯ ﺩﮬﮑﺎ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺁﮔﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﻋﺎﻡ ﺣﺎﻻﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﮐﺴﯽ ﻣﺎﺩﮮ ﭘﺮ ﻗﻮﺕ ﻟﮕﺎﺋﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﺳﯽ ﺳﻤﺖ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻃﺮﻑ ﻗﻮﺕ ﻟﮕﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﻧﯿﻮﭨﻦ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻗﺎﻧﻮﻥِ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﯽ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ۔
ﺗﺎﮨﻢ ﻧﻈﺮﯾﺎﺗﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﺎﺩﮮ ﮐﯽ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﻣﻨﻔﯽ ﮐﻤﯿﺖ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻟﯿﮑﭩﺮﮎ ﭼﺎﺭﺝ ﻣﻨﻔﯽ ﯾﺎ ﻣﺜﺒﺖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﻓﺰﯾﮑﻞ ﺭﯾﻮﯾﻮ ﻟﯿﭩﺮﺯ ﻧﺎﻣﯽ ﺳﺎﺋﻨﺴﯽ
ﺟﺮﯾﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ۔

ایسا کیسے ممکن ہوا؟


ﻭﺍﺷﻨﮕﭩﻦ ﺳﭩﯿﭧ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﮯ ﭘﺮﻭﻓﯿﺴﺮ ﭘﯿﭩﺮ ﺍﯾﻨﮕﻠﺰ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮭﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﺭﻭﺑﯿﮉﯾﻢ ﻧﺎﻣﯽ ﻋﻨﺼﺮ ﮐﻮ ﻣﻨﻔﯽ 273 ﺩﺭﺟﮯ ﺗﮏ ﭨﮭﻨﮉﺍ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﻣﺎﺩﮮ ﮐﯽ ﻭﮦ ﺷﮑﻞ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﺌﯽ ﺟﺴﮯ  ﺑﻮﺯ ﺁﺋﻦ ﺳﭩﺎﺋﻦ ﺁﻣﯿﺰﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﺍﺱ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﺫﺭﺍﺕ ﺑﮯﺣﺪ ﺳﺴﺖ ﺭﻭﯼ ﺳﮯ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﻮﺍﻧﭩﻢ ﻣﮑﯿﻨﮑﺲ ﮐﮯ ﺍﺻﻮﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻟﮩﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻋﻤﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﻟﮩﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺣﺮﮐﺖ ﻣﯿﮟ ﺗﻮﺍﻧﺎﺋﯽ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺿﺎﺋﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ۔

ﺳﺎﺋﻨﺲ ﺩﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻨﻔﯽ ﮐﻤﯿﺖ ﻭﺍﻻ ﻣﺎﺩﮦ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻟﯿﺰﺭ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﺳﮯ ﺭﻭﺑﯿﮉﯾﻢ ﮐﮯ ﺍﯾﭩﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﻗﺎﺑﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﺵ ﮐﯽ ﺳﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﺭﻓﺘﺎﺭ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮐﺮﺩﯼ۔
ﺟﺐ ﺍﻥ ﺍﯾﭩﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﻟﯿﺰﺭ ﮐﯽ ﮔﺮﻓﺖ ﺳﮯ ﺭﮨﺎ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﻌﺾ ﻧﮯ ﻣﻨﻔﯽ ﮐﻤﯿﺖ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺎﺩﮮ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻋﻤﻞ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔
ﻭﺍﺷﻨﮕﭩﻦ ﺳﭩﯿﭧ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﮯ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﺎﺭ ﭘﺮﻭﻓﯿﺴﺮ ﻣﺎﺋﯿﮑﻞ ﻓﻮﺭﺑﺰ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ‘ ﺁﭖ ﺍﮔﺮ ﻣﻨﻔﯽ ﮐﻤﯿﺖ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺎﺩﮮ ﮐﻮ ﺩﮬﮑﺎ ﺩﯾﮟ ﺗﻮ ﻭﮦ ‏( ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ‏) ﺁﭖ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﺍﯾﺴﺎ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﯾﮧ ﺍﯾﭩﻢ ﮐﺴﯽ ﻏﯿﺮ ﻣﺮﺋﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ‘
ﺍﺱ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﺳﮯ ﺳﺎﺋﻨﺲ ﺩﺍﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﯿﻮﭨﺮﺍﻥ ﺳﭩﺎﺭ، ﺑﻠﯿﮏ ﮨﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﮈﺍﺭﮎ ﺍﯾﻨﺮﺟﯽ ﺟﯿﺴﮯ ﻋﻮﺍﻣﻞ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺪﺩ ﻣﻠﮯ ﮔﯽ

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں