بدھ, مئی 22, 2024
اشتہار

’جنگ بندی مذاکرات میں نیتن یاہو رکاوٹ ہیں‘

اشتہار

حیرت انگیز

حماس کے رہنما نے اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو کو جنگ بندی مذاکرات میں رکاوٹ قرار دیا ہے۔

حسام بدران نے اسرائیلی وزیراعظم پر ایسے بیانات جاری کرنے کا الزام لگایا ہے جس کا مقصد جنگ بندی کے امکانات کو نقصان پہنچانا ہے۔

حماس کے اعلیٰ عہدیدار نے اے ایف پی کو بتایا کہ گروپ اپنی قیادت کے اندر اور اتحادی گروپوں کے ساتھ داخلی بات چیت کرنے کے عمل میں ہے اس سے پہلے کہ مذاکرات کاروں کے قاہرہ واپسی کے لیے جنگ بندی کے لیے مذاکرات جاری رکھے۔

’حماس جنگ بندی تجویز کا مثبت انداز میں جائزہ لے رہی ہے‘

- Advertisement -

لیکن انہوں نے خبردار کیا کہ بنجمن نیتن یاہو کے بار بار بیانات جس میں وہ رفح میں افواج بھیجیں گے کا اعلان کر رہے ہیں معاہدے پر پہنچنے کے کسی بھی امکان کو ناکام بنانے کے لیے ہے۔

انہوں نے ایک ٹیلی فون انٹرویو میں کہا کہ نتن یاہو مذاکرات کے تمام پچھلے دوروں اور پچھلے مذاکرات میں رکاوٹ تھے اور یہ واضح ہے کہ وہ اب بھی ہیں، وہ کسی معاہدے تک پہنچنے میں دلچسپی نہیں رکھتا، اور اس لیے وہ ان موجودہ کوششوں کو ناکام بنانے کے لیے میڈیا میں بیان دیتا رہتا ہے۔

بدران نے اس بات کا اعادہ کیا کہ حماس کا مقصد ایک پائیدار جنگ بندی اور "غزہ کی پٹی سے قابض افواج کا مکمل اور جامع انخلاء” ہے۔

Comments

اہم ترین

ویب ڈیسک
ویب ڈیسک
اے آر وائی نیوز کی ڈیجیٹل ڈیسک کی جانب سے شائع کی گئی خبریں

مزید خبریں