شمالی کوریا نے 65 سال بعد امریکی فوجیوں کی لاشیں واپس کردیں North Korea
The news is by your side.

Advertisement

شمالی کوریا نے 65 سال بعد امریکی فوجیوں کی لاشیں واپس کردیں

واشنگٹن: جنگ کوریا کے 65 سال بعد شمالی کوریا نے امریکی فوجیوں کی لاشیں واپس کردی ہیں۔

غیرملکی خبرساں ادارے کے مطابق ٹرمپ اور شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ ان کے درمیان ہونے والی ملاقات میں امریکی فوجیوں کی باقیات واپس کرنے کا معاہدہ ہوا تھا، ہلاک فوجیوں کے تابوتوں اقوام متحدہ کے جھنڈے میں لپیٹا گیا ہے۔

امریکی فوجیوں کی باقیات امریکا روانہ کرنے سے قبل جنوبی کوریا کے شہر اوسان میں تقریب کا انعقاد کیا گیا جس میں امریکا، اقوام متحدہ اور شمالی کوریا کے 500 اراکین نے شرکت کی۔

کوریائی جنگ میں ہلاک ہونے والے امریکیوں کی باقیات 55 تابوتوں میں امریکی ریاست ہوائی پہنچیں جہاں نائب امریکی صدر مائیک پینس نے انہیں وصول کیا۔

واضح رہے کہ 1950 سے 1953 تک شمالی کوریا اور جنوبی کوریا کے درمیان جنگ ہوئی تھی، اس جنگ میں شمال کو چین اور سوویت جبکہ جنوب کو امریکا کی حمایت حاصل تھی۔

پہلے کوریا ایک ہی ملک تھا جس پر 1910 سے 1945 تک جاپان نے حکومت کی، دوسری جنگ عظیم میں جاپان کی شکست کے بعد 1948 میں اسے دو حصوں شمال اور جنوب میں تقسیم کردیا گیا، شمالی کوریا سوویت یونین کے حصے اور جنوبی کوریا امریکا کو ملا۔

شمالی کوریا پر کمیونسٹ نظریات کا غلبہ رہا، ان دونوں عالمی طاقتوں کے درمیان چپقلش شروع ہوئی جس کا نتیجہ جنگ کی صورت میں نکلا جس میں 12 لاکھ افراد ہلاک ہوئے جن میں 35 ہزار سے زیادہ امریکی فوجی شامل تھے، جنگ کے نتیجے میں کوریا کی دونوں ریاستیں مکمل طور پر تباہ و برباد ہوگئی تھیں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں