The news is by your side.

Advertisement

ایف اے ٹی ایف اورپاکستان کے درمیان براہ راست مذاکرات کا آغاز آج سے ہوگا

بیجنگ : بین الاقوامی فورم ایف اے ٹی ایف اور پاکستان کے درمیان براہ راست مذاکرات کا آغاز آج سے بیجنگ میں ہوگا، اس بارامید کی جا رہی ہے کہ ایف اے ٹی ایف پاکستان کو گرے لسٹ سے نکال کر وائٹ لسٹ میں شامل کر سکتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق غیر قانونی مالی وسائل کی ترسیل روکنے کے حوالے سے بین الاقوامی فورم ایف اے ٹی ایف اور پاکستان کے درمیان تین روزہ مذاکرات آج بیجنگ میں شروع ہوں گے۔

پاکستانی وفدکی قیادت وفاقی وزیراقتصادی امورحماداظہرکررہے ہیں جبکہ وفدمیں وزارت خارجہ،داخلہ،نیکٹا، کسٹمز اور اسٹیٹ بینک حکام شامل ہیں، مذاکرات میں پاکستان کی جانب سے جمع کروائی گئی عملدرآمد رپورٹ زیربحث آئے گی اور پاکستان اکتوبر تا جنوری تک 27 شرائط پرعملدرآمدرپورٹ پیش کرے گا۔

یاد رہے پاکستان نظرثانی رپورٹ آٹھ جنوری کوایف اےٹی ایف کوبھجوا چکا ہے ، جس میں پاکستان کی جانب سے دہشت گردوں کی مالی معاونت روکنے اور اینٹی منی لانڈرنگ روکنے کیلئے ٹھوس اقدامات سے آگاہ کیا گیا ہے۔

مزید پڑھیں : پاکستان نے ایف اے ٹی ایف کے سوالنامے کا تفصیلی جواب بھجوا دیا

پاکستان کی رپورٹ سولہ فروری سے پیرس میں شروع ہونے والےاجلاس میں زیرغور لائی جائے گی اور پیرس اجلاس میں پاکستان کوگرے لسٹ سے نکالنے کیلئے ووٹنگ ہوگی۔

خیال رہے کالعدم تنظیموں کومالی وسائل پرپابندی کےحوالےسےکئے جانے والے کامیاب اقدامات کےباعث پاکستان کوایف اے ٹی ایف کی گرےلسٹ میں رکھا گیا ہے، پاکستان گزشتہ اجلاسوں میں ایف اے ٹی ایف کوناجائزمالی ذرائع روکنےکےحوالے سےاپنی کامیابیوں سےآگاہ کرتا آیا ہے، اس بارامید کی جا رہی ہے کہ ایف اے ٹی ایف پاکستان کو گرے لسٹ سے نکال کر وائٹ لسٹ میں شامل کر سکتا ہے۔

واضح رہے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے ارکان کی تعداد 37 ہے جس میں امریکا، برطانیہ، چین، بھارت اور ترکی سمیت 25 ممالک، خیلج تعاون کونسل اور یورپی کمیشن شامل ہیں، تنظیم کی بنیادی ذمہ داریاں عالمی سطح پر منی لانڈرنگ اور دہشت گردوں کی مالی معاونت روکنے کے لیے اقدامات کرنا ہیں۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں