site
stats
عالمی خبریں

افغان طالبان کا وفد امن مذاکرات کی بحالی کے لئے پاکستان پہنچ گیا، ذرائع

اسلام آباد: افغان طالبان کا وفد کابل سے امن مذاکرات کو دوبارہ شروع کرنے کے لئے پاکستان پہنچ گیا۔

تفصیلات کے مطابق افغان طالبان کا دورہ کراچی اس وقت سامنے آیا ہے، جب افغان صدر اشرف غنی کی جانب سے بیان دیا گیا کہ پاکستان حکومت طالبان کے خلاف کاروائی کرے، اگر پاکستان کی جانب سے کاروائی نہیں کی گئی تو پاکستان کے ساتھ افغانستان کے سفارتی سطح پر تعلقات خراب ہو سکتے ہیں۔

پاکستان میں مقیم افغان طالبان کےسنیئر مصدر نے غیر ملکی ایجنسی کو بتایا کہ تیں رکنی افغان طالبان کا وفد پاکستان اور افغانستان کے حکام سے رابطے کرے گا۔

خبر راساں ادارے اے ایف پی کے مطابق اس دورے کا بنیادی مقصد ایسے راستے تلاش کرنا ہیں جس کے ذریعے سے افغانستان میں امن کو یقینی بنایا جاسکے۔

تاحال باضابطہ طور پر اس امن مذاکرات کا آغاز کا نہیں ہوا تاہم دو افغان طالبان کے ذرائع نے افغان طالبان کے دورے کی تصدیق کی ہے لیکن ابھی تک پاکستان اور افغانستان کی جانب سے باضابطہ طور پر تصدیق نہیں کی گئی ہے۔

افغان طالبان کے ایک ترجمان قاری یوسف نے افغان طالبان کے اس دورے سے لاعلمی کا اظہار کیا ہے۔

گزشتہ سال جولائی میں افغان حکومت اور افغان طالبان میں براہ راست مذاکرات شروع ہوئے تھے لیکن افغان طالبان کے سربراہ ملا عمر کے ہلاکت کی خبر تاخیر سے منظر عام پر آنے کے بعد مذاکرات معطل ہو گئے تھے۔

افغان طالبان کے سربراہ کی ہلاکت کی خبر کے باعث افغان طالبان میں اندورنی کشیدگی پیدا ہوگئی تھی۔

امن مزاکرات میں چار رکنی گروپ جس میں امریکہ، چین، افغانستان، پاکستان شامل ہیں، چاروں ممالک جنوری سے امن مذاکرات کی بحالی کے لئے کوشیشں کر رہے ہیں۔

واضح رہے کہ امریکہ کی2001 میں افغانستان میں مداخلت کے بعد ملک میں خانہ جنگی کی صورت حال اختیار کر گئی تھی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top