وزیراعظم کا استعفیٰ، لیگی وزراء دو حصوں میں تقسیم -
The news is by your side.

Advertisement

وزیراعظم کا استعفیٰ، لیگی وزراء دو حصوں میں تقسیم

اسلام آباد : وزیراعظم کے استعفے کے معاملے پر لیگی وزراء میں پھوٹ پڑ گئی، خواجہ آصف اورسعد رفیق نے وزیر اعظم کو مستعفی نہ ہونے کی تجویز دی جبکہ چوہدری نثار نے محاذآرائی سے گریز کرنے کا مشورہ دیا۔

تفصیلات کے مطابق پاناما کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ آنے کے بعد وزیر اعظم نواز شریف نے اپنے رفقاء کے ساتھ صلاح مشورے شروع کردیئے ہیں، ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم کے مستعفی ہونے کے معاملے پر وزراء میں پھوٹ پڑ گئی ہے۔


ضرور پڑھیں: جےآئی ٹی کی شریف خاندان کے خلاف نیب ریفرنس کی سفارش


جے آئی ٹی رپورٹ آنے کے بعد کیا کیا جائے، سیاسی شہید بنا جائے یا کوئی راہ نکالی جائے، اس حوالے سے وزیر اعظم نواز شریف اپنے رفقاء کے ساتھ سر جوڑ کر بیٹھ گئے۔

وزیر اعظم ہاؤس میں ہونے والے اجلاس میں وفاقی وزراء خواجہ آصف اور خواجہ سعد رفیق نے نواز شریف کو مشورہ دیا ہے کہ استعفیٰ کسی صورت نہیں دیں اورحالات کا ڈٹ کر مقابلہ کریں، اس موقع پر وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار نے وزراء کو محاذ آرائی سے گریز کرنے کا مشورہ دیا، اس پر کابینہ کے ارکان میں پھوٹ پڑ گئی۔

چوہدری نثار نے اس حکمت عملی سے متعلق مکمل لاتعلقی کا اعلان کیا اور آئندہ ایسے کسی اجلاس میں شرکت سے بھی معذرت کرلی ہے۔

اے آر وائی نیوز کے بیورو چیف اسلام آباد صابر شاکر کے مطابق چوہدری نثارعلی خان کا کہنا ہے کہ آئین اورقانون کے مطابق سیاسی فیصلہ کرتے ہوئے معاملے کو آگے بڑھایا جائے۔

چوہدری نثار نے یہ بھی تجویز دی کہ آپ نیا لیڈر آف دی ہاؤس لے آئیں اور پارٹی کو بچائیں اور اداروں سے کسی قسم کی محاذ آرائی نہ کی جائے لیکن ان کی ان تجاویز کو یکسر مسترد کردیا گیا۔

ذرائع کے مطابق نواز شریف نے اس مشورے کو پسند کیا کہ مظلوم بنا جائے، علاوہ ازیں نمائندہ اسلام آباد اظہر فاروق کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم نواز شریف نے بھی یی فیصلہ کیا ہے کہ وہ عہدے سے کسی بھی صورت مستعفی نہیں ہوں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں