The news is by your side.

Advertisement

مینار پاکستان واقعہ: لاہور کے مختلف علاقوں میں پولیس کے چھاپے

لاہور: صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں مینار پاکستان پر ہجوم کی جانب سے خاتون پر جنسی حملے کے واقعے کے بعد پولیس کی چھاپہ مار کارروائیاں جاری ہیں، اب تک متعدد افراد کو گرفتار اور متعدد سے پوچھ گچھ کی جاچکی ہے۔

تفصیلات کے مطابق یوم آزادی کے روز مینار پاکستان پر ہجوم کی جانب سے خاتون پر جنسی حملے کے دہشت ناک واقعے کے بعد رات گئے پولیس نے راوی روڈ، بادامی باغ، لاری اڈا اور شفیق آباد کے علاقوں میں چھاپہ مار کارروائیاں کیں۔

لاہور پولیس نے 15 افراد کو حراست میں لے کر تھانہ لاری اڈا منتقل کردیا۔

پولیس کا کہنا ہے زیر حراست افراد کے موبائل نمبرز کی 14 اگست کو لوکیشن ٹریس کی جائے گی اور زیر حراست افراد کو ویڈیوز میں نظر آنے والے ملزمان سے میچ کیا جائے گا۔

بعد ازاں پولیس نے مزید 20 کے قریب مشتبہ افراد سے پوچھ گچھ کی، تاہم پوچھ گچھ کے بعد انہیں چھوڑ دیا گیا۔ پولیس کے مطابق مشتبہ افراد کی ویڈیو سے شناخت کرنے کی کوشش کی گئی۔

دوسری جانب ڈی آئی جی آپریشنز ساجد کیانی نے متاثرہ لڑکی سے ملاقات کی۔ ساجد کیانی نے متاثرہ لڑکی کو فوری انصاف کی یقین دہانی کرواتے ہوئے کہا کہ انصاف کی فراہمی کے لیے تمام وسائل بروئے کار لائیں گے۔

یاد رہے کہ 14 اگست کے روز مینار پاکستان پر موجود خاتون کو وہاں موجود 400 افراد کی جانب سے تشدد، جنسی حملے اور لوٹ مار کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

وزیر اعظم عمران خان نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے خاتون سے دست درازی کرنے والوں کو فوری گرفتار کرنے کا حکم دیا تھا۔ وزیر اعظم نے آئی جی پنجاب سے رابطہ کر کے ہدایت دی ہے کہ خاتون سے دست درازی کرنے والوں کو فوری گرفتار کیا جائے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں