قدیم مصری راز سے پردہ اٹھ گیا -
The news is by your side.

Advertisement

قدیم مصری راز سے پردہ اٹھ گیا

جدید تحقیق نےبالاخر اس راز سے پردہ اٹھا دیا ہے کہ قدیم مصری اقوام اپنے مردوں کو مٹکوں میں بند کرکے کیوں دفن کیا کرتے تھے‘ اس سے قبل خیال کیا جاتا تھا کہ تدفین کا یہ طریقہ محض غریبوں میں رائج تھا لیکن حقیقت اس کے برعکس نکلی۔

قدیم مصر کو انسانی تہذیب کا گہوارہ بھی کہا جاتا ہے ‘ اس پراسرار سرزمین میں انسانی ارتقاء کے کئی راز دفن ہیں اور جیسے جیسےتحقیق آگے بڑھ رہی ہے ‘ کئی رازوں سے پردہ اٹھ رہا ہے۔

مصر میں مختلف مقامات پر کھدائیوں کے دوران کئی مقامات پر ایسے مٹکے دریافت ہوئے ہیں جن میں عموماً کم عمر بچوں کو دفن کیا گیا تھا‘ قیاس کیا جاتھا کہ قدیم مصری معاشرے کے غریب افراد اپنے بچوں کیا بعض حالات میں بڑوں کو بھی دفن کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا تھا لیکن حال ہی میں ہونے والی اس تحقیق نے اس مفروضے کو غلط قراردیا ہے۔

pot

سڈنی کی میک کیوری یونی ورسٹی سے تعلق رکھنے والے ماہرمصریات ین ٹریسٹنٹ اور حیاتیاتی آرکیالوجسٹ رونیکا پاور نے ایک جدید تحقیق مرتب کی ہے۔ ان کے مطابق مٹکوں میں صرف غریب افراد ہی اپنے بچوں کو دفن نہیں کرتے تھےبلکہ امیروں میں بھی یہ عمل رائج تھا اور اس کی باقاعدہ وجہ تھی۔

مصر کا قدیم جادو ترجمہ کرلیا گیا

مصر میں 7ہزار سال پرانا قدیم شہر دریافت

  تحقیق میں دریائے نیل کے کنارے 46 مدفنوں سے برآمد ہونے والے نمونہ جات کا جائزہ لیا گیا ہے جن کی عمریں 3300 قبل مسیح سے 1650 قبل مسیح کے درمیان ہیں۔

امریکی سائنسدانوں کا خلائی مخلوق سے ازخود رابطہ کرنے کا فیصلہ

 تحقیق کے دوران بچوں کی 746 باقیات کا جائزہ لیا گیا جن میں سے 338 کو باقاعدہ لکڑی کے تابوت میں دفن کیا گیا ہے جبکہ 329 کی تدفین مٹکے میں کی گئی ہے۔ ایک گورنر کے مقبرے سے ایک نوزائیدہ بچہ مٹکے میں حنوط شدہ حالت میں ملا کہ ایسے سونے کے پترے میں لپیٹا گیا تھا جبکہ دیگر مٹکوں سے بھی سونا‘ ہاتھی دانت‘ قیمتی کپڑے اور کئی دیگر قیمتی اشیا ملی ہیں جن سے ثابت ہوتا ہے کہ مٹکے کا استعمال غربت کے سبب نہیں تھا۔

مٹکوں میں تدفین کرنے کے لیے اکثر اوقات میت کو ایسے ہی مٹکے میں رکھا جاتا تھا

اور کچھ قبروں سے برآمد ہونے والے مٹکوں کو میت رکھنے کے لیےکاٹا بھی گیا تھا


سائنسدانوں نے طویل تحقیق کے نتیجے میں یہ دلیل قائم کی ہے کہ قدیم مصر کے رہنے والے مٹکے میں تدفین اس لیے کرتے تھے کہ یہ رحمِ مادر کی صورت سے مشابہہ ہے اور مٹکے میں تدفین حیات بعد از موت کی جانب اشارہ کرتی ہے‘ سائنسدانوں نے یہ نتائج مٹکوں پر بنے نقش و نگار اور دیگر شواہد پر عرق ریزی کے بعد مرتب کیے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں