The news is by your side.

Advertisement

تصویر پہیلی: دروازہ کس بٹن سے کھلے گا؟ بٹوہ کس نے چوری کیا؟

روزہ مرہ زندگی میں ہم جب مختلف چیزیں دیکھتے ہیں، تو ہماری توجہ ان کی اچھائی، برائی یا کسی خامی کی طرف فوراً مبذول ہو جاتی ہے، اور ہم ایک دوسرے کی چیزوں مثلاً کپڑوں، بالوں کے اسٹائل وغیرہ پر بھی آسانی سے تنقید کر لیتے ہیں۔

لیکن بعض اوقات جب ہم سے سنجیدہ معاملات میں تنقیدی جائزہ لینے کا کہا جاتا ہے تو اکثر ہم بڑی مشکل محسوس کرتے ہیں، مگر ہمارا فوکس یعنی توجہ کی صلاحیت اچھی ہو تو ہماری نگاہ کسی بھی سنجیدہ معاملے کی خوبی، خامی بھی تلاش کر لیتی ہے۔

ہم اپنی تنقیدی صلاحیتوں کا تو روز استعمال کرتے ہیں، لیکن ذیل میں ہم پہیلیوں پر مبنی دو ایسی تصاویر پیش کر رہے ہیں، جنھیں پرکھنے کے لیے آپ کی نگاہِ تیز کے ساتھ ساتھ جنرل نالج یعنی عام معلومات کے ذخیرے کی بھی ضرورت ہوگی۔

دروازہ کس بٹن سے کھلے گا؟

آپ نے ان تصاویر میں موجود کسی غلطی کی تلاش نہیں کرنی ہے، جیسا کہ آپ سے عموماً تصویر پہیلی میں کہا جاتا ہے، بلکہ ان میں سے ایک تصویر ایسی ہے جس میں گھروں کی سیفٹی کے لیے الیکٹرانک سسٹم پر مبنی ایک پہیلی دی گئی ہے۔

آپ نے اس تصویر کو بغور دیکھ کر یہ بتانا ہے کہ دروازہ کھولنے کے لیے کون سا بٹن دبانا چاہیے؟ یعنی کس بٹن سے دروازہ کھلے گا؟

دوسری تصویر یہ ہے، جس میں ایک گروسری اسٹور کا منظر ہے، اور یہاں انسانوں پر مبنی چار مختلف آپشنز ہیں، اور آپ نے ان میں ایک چور کو تلاش کرنا ہے، اس چور نے کسی کا بٹوہ چرایا ہے، اور چور ان ہی میں سے ایک ہے۔

بٹوہ کس نے چوری کیا؟

خاتون کا کہنا ہے کہ وہ اپنے بچے کی دیکھ بھال میں لگی تھیں، چوری اس نے نہیں کی۔ نوجوان نے بتایا کہ وہ تو کیمرے سے تصاویر لے رہا تھا میں نے چوری نہیں کی۔ کاؤنٹر والی لڑکی نے کہا کہ میں اگلے کسٹمر کی مدد کر رہی تھی۔ پائلٹ کے کپڑوں میں ملبوس آخری شخص نے کہا کہ میری نگاہ کم زور ہے، اس نے تو کچھ نہیں دیکھا۔

ان تصویری پہیلیوں کا درست جواب آپ کو ذہین ثابت کر سکتا ہے، تو کیا ہے آپ کا جواب؟

جواب دیکھیں

دروازہ اس بٹن سے کھلے گا

یہ ہے چور جس نے پائلٹ کی وردی پہنی ہے لیکن اس کو یہ نہیں پتا کہ پائلٹ کی نظر کم زور نہیں ہو سکتی، ورنہ وہ پائلٹ نہیں بن سکتا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں