The news is by your side.

امریکا کا پاکستان میں میڈیا اداروں پر پابندیوں پر اظہار تشویش، ایف سولہ طیاروں اور امداد پر بریفنگ

واشنگٹن: امریکا نے پاکستان میں میڈیا اداروں پر پابندیوں پر اظہار تشویش کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ترجمان امریکی محکمہ خارجہ نیڈ پرائس نے کہا ہے کہ ہم اے آر وائی نیوز پر حالیہ پابندیوں کے حوالے سے آگاہ ہیں، پاکستان کے ساتھ میڈیا کی آزادی کا معاملہ ہر سطح پر مسلسل اٹھایا جاتا ہے۔

اے آر وائی نیوز کے نمائندے کے سوال پر نیڈ پرائس نے کہا ہمیں پاکستان میں میڈیا آؤٹ لیٹس اور سول سوسائٹی پر نمایاں پابندیوں کی وجہ سے تشویش لاحق ہے، میں جانتا ہوں کہ آپ کا آؤٹ لیٹ ARY اس پابندی سے محفوظ نہیں ہے۔

انھوں نے کہا ہم دنیا بھر کے تمام اسٹیک ہولڈرز بشمول اپنے شراکت داروں اور پاکستان میں اپنے ہم منصبوں کے سامنے پریس کی آزادی کے بارے میں اپنے خدشات کو معمول کے مطابق اٹھاتے ہیں۔

ہمیں تشویش ہے کہ میڈیا اور چھپنے کی پابندیاں، نیز صحافیوں کے خلاف حملوں کے لیے جواب دہی کی کمی، آزادئ اظہار، پر امن اجتماع اور انجمن کے استعمال کو نقصان پہنچاتی ہے۔

ایک آزاد پریس اور باخبر شہری جس کے بارے میں ہم سمجھتے ہیں کہ دنیا بھر کے جمہوری معاشروں کی کلید ہے، ہمارے جمہوری مستقبل کی کلید ہے، اس کا اطلاق پاکستان پر بھی اتنا ہی ہوتا ہے جیسا کہ دنیا کے دیگر ممالک پر ہوتا ہے۔

نیڈ پرائس کا کہنا تھا کہ پاکستان کو 450 ملین ڈالر کی ایف سولہ طیاروں کے پرزوں کی فروخت سے متعلق کانگریس کو حال ہی میں آگاہ کر دیا گیا ہے، طیاروں کی مرمت سے دہشت گردوں کے خلاف کارروائیوں میں مدد ملے گی، انھوں نے کہا پاکستان متعدد حوالوں سے امریکا کا اہم اتحادی ہے۔

ہماری دیرینہ پالیسی ہے کہ ہم امریکی نژاد پلیٹ فارمز کو ہمیشہ برقرار رکھیں، پاکستان کا F-16 پروگرام امریکا اور پاکستان کے وسیع تر دو طرفہ تعلقات کا ایک اہم حصہ ہے، اور یہ مجوزہ فروخت موجودہ اور مستقبل کے انسداد دہشت گردی کے خطرات سے نمٹنے کے لیے پاکستان کی صلاحیت کو برقرار رکھے گی، ہم توقع کرتے ہیں کہ پاکستان تمام دہشت گرد گروہوں کے خلاف مستقل کارروائیاں کرتا رہے گا۔

ترجمان امریکی محکمہ خارجہ نے پاکستان میں سیلاب سے جانی و مالی نقصان پر اظہار افسوس کیا اور کہا ہمیں ان تاریخی سیلابوں کی تباہ کاریوں اور پاکستان بھر میں ہونے والے جانی نقصان پر بہت دکھ ہے، مشکل کی اس گھڑی میں ہم پاکستانی عوام کے ساتھ کھڑے ہیں۔

انھوں نے امداد کی تفصیل بتاتے ہوئے کہا 12 ستمبر تک، اس ہفتے کے شروع میں، امریکی سینٹرل کمانڈ کی کل 9 پروازوں نے USAID کے دبئی کے گودام سے 630 میٹرک ٹن امدادی سامان میں سے نصف سے زیادہ کی ترسیل کی ہے۔ مجموعی طور پر سینٹکام 41 ہزار سے زیادہ کچن سیٹ، ڈیڑھ ہزار پلاسٹک کی چادروں کے رول، دسیوں ہزار پلاسٹک ٹارپس، 8,700 شیلٹر فکسنگ کٹس بھیجے گا۔

نیڈ پرائس نے بتایا کہ صرف اس مالی سال میں، ہم نے پاکستان کو 53 ملین ڈالر سے زیادہ کی انسانی امداد فراہم کی ہے، جس میں کھانے پینے کی اشیا، کثیر مقصدی نقدی، ادویہ وغیرہ کے ساتھ ساتھ خیمے بھی شامل ہیں۔ ہم اپنے پاکستانی شراکت داروں کے ساتھ مل کر کام کرتے رہیں گے تاکہ ان سیلابوں سے ہونے والے نقصانات کا جائزہ لیتے رہیں، اور ہم ضرورت کے اس کڑے وقت میں اپنے شراکت داروں کو مدد فراہم کرتے رہیں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں