The news is by your side.

Advertisement

روس کا جوابی وار، دو یورپی ملکوں کی گیس بند کر دی

ماسکو: روس نے یوکرین تنازع کے پیش نظر روسی کرنسی "روبل” میں رقم کی ادائیگی نہ کرنے پر پولینڈ اور بلغاریہ کو گیس کی فراہمی بند کردی۔

برطانوی خبر رساں ادارے رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق روس نے بدھ کو یمل معاہدے کے تحت پولینڈ اور بلغاریہ کو گیس کی سپلائی روک دی ہے، روس کی گیس فراہم کرنے والی سب سے بڑی کمپنی گیزپروم نے سپلائی اپریل کے لیے رقم کی ادائیگی روسی کرنسی روبل میں نہ کرنے پر بند کی ہے۔

پولینڈ اپنی ضرورت کی 50  فیصد گیس روس سے خریدا ہے، اس کا روسی انرجی کمپنی گیزپروم سے سالانہ 10 اعشاریہ دو بلین کیوبک میٹر گیس کا معاہدہ ہے، سپلائی بند ہونے پر پولینڈ  کو کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

دوسری جانب بلغاریہ جس کا تقریباً مکمل انحصار روس سے درآمد ہونے والی گیس پر ہے، اس کیلئے مشکلات زیادہ بڑھ سکتی ہیں۔ بلغاریہ کا کہنا ہے کہ وہ پہلےسے ہی گیزپورم سے ہوئے معاہدے کی شرائط پر عمل کر رہا ہے، اگر ادائیگیوں کے نئے طریق کار کا مطالبہ کیا گیا تو یہ معاہدے کی خلاف ورزی ہو گی۔

خیال رہے کہ یوکرین تنازع کے باعث مغربی ممالک کی جانب سے عائد کی گئی پابندیوں کے باعث روس کے صدر ولادمیر پیوٹن نے مطالبہ کیا تھا کہ جو ممالک روس کو اپنا دوست تصور نہیں کرتے وہ گیس کی فراہمی کے لیے ادائیگی روبل میں کریں، ہنگری کے علاوہ تمام یورپی ممالک نے روسی صدر پیوٹن کے مطالبہ کو ماننے سے انکار کردیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: روس نے یوکرین جنگ کے دوسرے مرحلے کا اعلان کر دیا

روس نے ابتدائی طور پر پولینڈ اور بلغاریہ کو نشانہ بنایا ہے۔ تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اگر رس نے دیگر یورپی ممالک کو بھی گیس کی سپلائی روک دی تو اس سے یورپی ممالک کو شید دھچکہ لگے گا، اور پہلے سے آسمان کو چھوتی گیس کی قیمیتوں میں مزید اضافہ ہوجائے گا، اور یورپی ممالک کو راشننگ کرنی پڑے گی۔

گیس سپلائی بند کرنے پر ردعمل دیتے ہوئے یوکرین نے روس پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ توانائی کے معاملے کی بنیاد پر یورپ کو بلیک میل کر کے اس کے اتحادیوں کو دور کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں