The news is by your side.

سجاد ظہیر کا تذکرہ جن کے طفیل اردو ادب ایک نئے عہد سے آشنا ہوا

ترقّی پسند تحریک نے اردو ادب کے دامن کو متنوع موضوعات کے ساتھ وسعتِ‌ بیان اور ہمہ گیری عطا کی تھی۔ اس تحریک نے ادب اور سماج کے ہر شعبے پر گہرے اثرات مرتب کیے، لیکن بالخصوص ادب میں حقیقت نگاری کے ساتھ عام آدمی اور اس کی زندگی کا ہر پہلو موضوع بنا اور یہ سب سید سجاد ظہیر کے مرہونِ منّت تھا۔

انھیں پاک و ہند کا نام ور ادیب، انقلابی اور مارکسی دانش ور کہا جاتا ہے جو 13 ستمبر 1973ء کو اس دنیا سے رخصت ہوگئے تھے۔ ان کا انتقال ایک ادبی تقریب کے دوران ہوا جو متحدہ روس کے شہر الماتی میں منعقد ہوئی تھی۔ اردو ادب اور ترقّی پسند تحریک کی تاریخ و تذکرہ سجاد ظہیر کے بغیر ادھورا رہے گا۔

وہ ترقی پسند تحریک کے روح رواں تھے اور افسانہ نگاری، ڈرامہ اور ناول نگاری ان کا میدان رہاط سجّاد ظہیر 5 نومبر1905ء کو لکھنؤ، یو پی میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد سیّد وزیر حسن صاحبِ ثروت اور اعلیٰ تعلیم یافتہ شخص تھے۔ اس خاندان کا اپنے علاقے میں بڑا اثرو رسوخ اور مقام تھا۔ والد کانگریسی تھے اور گھر میں مشہور اور قابلِ‌ ذکر شخصیات کی آمدورفت رہتی تھی جس نے سجاد ظہیر کو بھی علم و ادب اور سیاست کا شعور دیا۔ وہ ابتدائی عربی اور فارسی کی تعلیم کے بعد ہائی اسکول میں داخل ہوئے۔ یہ وہ وقت تھا جب ہندوستانی سیاست ہنگامہ خیز دور میں داخل ہورہی تھی اور دنیا انقلابی تبدیلیوں سے گزر رہی تھی۔ 1917ء میں روس میں انقلاب کے اثرات ہندوستان پر بھی مرتّب ہوئے۔ اب جگہ جگہ انقلاب کی باتیں ہونے لگیں۔ برطانوی سامراج نے ہندوستان پر اپنا تسلّط برقرار رکھنے کے لیے مختلف سختیاں، جبر اور ہتھکنڈے اپنا لیے تھے جس نے ہر نوجوان کی طرح سجاد ظہیر کو بھی متاثر کیا۔

1918 ء میں ہندوستان کے مزدور طبقے نے ہڑتال شروع کردی اور ملوں اور کارخانوں کے ملازم سڑکوں پر نکل آئے۔ 1919ء میں جلیانوالہ باغ کا سانحہ ہوگیا۔ نوعُمر سجّاد ظہیر نے اس کا گہرا اثر لیا۔ گویا واقعات کا ایک تسلسل تھا، جس نے نوعمری میں سجّاد ظہیر کو سیاسی اور سماجی طور پر باشعور بنا دیا تھا۔

ان کے ایک عزیز اخبارات و رسائل اور ناولز کے شوقین تھے۔ سجّاد ظہیر ان کی کتابوں سے استفادہ کرنے لگے اور علم کے خزانے سے خوب فیض یاب ہوئے۔ یوں نوجوانی کی دہلیز پر قدم رکھتے ہی سجاد ظہیر کو ادب سے دِل چسپی پیدا ہو گئی تھی۔

انھوں نے گورنمنٹ جوبلی ہائی اسکول، لکھنؤ سے 1921ء میں میٹرک کا امتحان پاس کیا اور کرسچین کالج، لکھنؤ سے 1924ء میں انٹرمیڈیٹ کیا۔ اب ان کا حلقۂ احباب وسعت اختیار کرنے لگا تھا۔ سیاسی، مذہبی، ادبی اور سماجی مباحث زندگی کا لازمی حصّہ بن چُکے تھے اور وہ خود بھی کچھ کر گزرنے کا جذبہ دِل میں رکھتے تھے۔ سماج کے امتیازات اور قوم پرستی کے جذبے کو اُسی زمانے میں اودھ کے کسانوں زمین داروں کے خلاف بغاوت نے مہیمز دی اور وہ مزدوروں کی تحریک میں دِل چسپی لینے لگے۔

انھوں نے کمیونسٹ پارٹی کا انتخاب کیا۔ انگریزی، فرانسیسی اور روسی ادب کا مطالعہ اور مختلف نظریات سے لگاؤ اور زیادہ بڑھ گیا۔ 1926ء میں اے کا امتحان پاس کیا اور 1927 ء میں لندن، اوکسفرڈ یونی ورسٹی سے بار ایٹ لا کی سند حاصل کی۔ اسی عرصے میں کمیونزم پر ڈھیروں کتابیں پڑھ ڈالیں۔ 1928ء میں اوکسفرڈ کے اسی طالبِ علم نے جدید تاریخ اور معاشیات کا انتخاب کیا۔ 1929ء میں برطانیہ میں ہندوستانی کمیونسٹ طلبہ کا اوّلین گروپ بنا ڈالا اور جب برطانیہ نے ’’سائمن کمیشن‘‘ کا اعلان کیا، تو اس کے خلاف جلوس کی قیادت بھی کی اور پولیس کی لاٹھیاں بھی کھائیں۔

1932ء میں سجّاد ظہیر نے اوکسفرڈ سے بی اے کا امتحان پاس کرکے ہندوستان لوٹنے پر ’’انگارے‘‘ کے عنوان سے 9 افسانوں پر مشتمل ایک کتاب مرتّب کی۔ کتاب میں خود سجّاد ظہیر کے 5 افسانے جب کہ دیگر لکھاریوں کی تخلیقات شامل تھیں۔ یہ مجموعہ معاشرے میں مروجّہ بعض مسلّمہ مذہبی اُمور اور عقاید پر سوال اٹھانے کی کوشش متصوّر کیا گیا اور ان کی شدید مخالفت کی گئی۔ یہاں تک کہ حکومت نے اس کتاب کو ضبط کرکے پابندی عائد کردی۔

سجّاد ظہیر نے اس کے بعد اوکسفرڈ یونی ورسٹی سے معاشیات میں ایم اے کی سند حاصل کی اور جب دنیا بھر میں تعقّل پسند ادیب، شاعر اور دانش وَر بڑی طاقتوں کی چھوٹے ممالک کو یرغمال بنانے اور قدرتی وسائل پر قبضہ کرنے کی سرمایہ دارانہ سوچ کے خلاف اکٹھے ہوئے اور 1935ء میں پیرس میں بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد ہوا تو جیسے سجّاد ظہیر کو نئی زندگی اور مقصد مل گیا۔ اس کانفرنس میں دُنیا بَھر سے چوٹی کے ادیب اور شاعر جمع ہوئے تھے اور ایک منشور پر دست خط کرتے ہوئے عہد کیا تھا کہ ظلم و بربریت کے خلاف اپنے قلم کا بے لاگ استعمال کریں گے۔ سجّاد ظہیر بھی اس کانفرنس میں موجود تھے۔

جب وہ پیرس سے لندن آئے، تو اپنے ہم خیال دوستوں کے ساتھ مل کر ’’انجمن ترقی پسند مصنّفین‘‘ کا ڈول ڈالا۔ منشور تیار ہوا، جس کے مطابق ادب کو قدامت پرستی سے نکال کر جدید عہد کے مطابق اس طرح سے ڈھالا جائے کہ وہ عوام کی آواز بنے۔

اسی عرصے میں سجّاد ظہیر نے ناول ’’لندن کی ایک رات‘‘ بھی مکمّل کیا۔ ان کا لگایا ہوا پودا پھل پھول رہا تھا۔ 1936ء آیا تو جگہ جگہ ترقی پسند اجتماعات اور تنظیمی سرگرمیاں ہونے لگیں اور بالآخر اپریل 1936ء میں ’’انجمن ترقی پسند مصنّفین‘‘ کا پہلا مرکزی جلسہ لکھنؤ میں منعقد ہوا جس میں عظیم ادیب اور شاعروں کے علاوہ عالم فاضل شخصیات، مدبّرین نے شرکت کی۔

سجّاد ظہیر کو انجمن کا سیکریٹری منتخب کیا گیا۔ پورے برّصغیر میں اب اس تحریک کا چرچا ہونے لگا۔

1940ء تک سجّاد ظہیر سیاسی، سماجی اور ادبی محاذ پر بہت متحرک نظر آئے۔ انگریزوں کے خلاف اُنھوں نے ایک بہت سخت تقریر کی، جس کی پاداش میں دو برس کی قید و بند کی صعوبتیں جھیلیں۔ رہائی کے بعد ’’قومی جنگ ‘‘ اور ’’نیا زمانہ ‘‘ کے مدیرِ اعلیٰ کے طور پر کام کیا۔ تقسیمِ ہند کے بعد 1948ء میں سجّاد ظہیر نے کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کی حکمتِ عملی کے تحت پاکستان کا سفر اختیار کیا اور کمیونسٹ پارٹی آف پاکستان کے جنرل سیکریٹری منتخب ہوئے۔ یہاں 1951ء میں ’’راول پنڈی سازش کیس‘‘ میں گرفتار ہوئے۔

چار سالہ قید و بند کے دوران سجّاد ظہیر نے ’’ذکرِ حافظؔ‘‘ اور ’’روشنائی‘‘ تحریر کی۔ 1955ء میں رہائی ملی، تو پاکستان سے دوبارہ ہندوستان کا سفر اختیار کیا۔ ’’پگھلا نیلم‘‘ کے عنوان سے 1964ء میں ان کا ایک شعری مجموعہ بھی سامنے آیا، جب کہ تراجم اس کے علاوہ تھے۔

بلاشبہ سجّاد ظہیر کی ترقی پسند تحریک نے اُردو ادب کو ایک نیا عہد اور اہل قلم کو ایک نئی سمت دی جس نے اردو زبان و ادب کو بلندی اور ہر سطح پر مقبولیت بخشی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں