The news is by your side.

Advertisement

سعودی پولیس اہلکار بھی قانون کی گرفت سے نہ بچ سکا، مقدمہ درج

ریاض : سعودی عرب میں قانون کی خلاف ورزی پر بلاتفریق سخت سزائیں لاگُو ہیں جس کی وجہ سے ہی شہریوں میں اس پر عمل پیرا ہونا لازمی امر ہے۔

ریاض پولیس کے ترجمان نے کہا ہے کہ گزشتہ روز مخالف سمت ڈرائیونگ کرتے ہوئے حادثے کا سبب بننے والے ڈرائیور کے خلاف فوری کارروائی نہ کرنے پرڈیوٹی پر متعین پولیس اہلکار کے خلاف محکمہ جاتی تحقیقات کا آغاز کردیا گیا ہے۔

سبق نیوز نے ریجنل پولیس ترجمان کے حوالے سے مزید کہا ہے کہ جائے حادثہ پر متعین اس پولیس اہلکار کے خلاف بھی کیس دائر کرلیا گیا ہے جووہاں موجود ہوتے ہوئے بھی اپنا فرض بخوبی ادا نہ کرسکا۔

پولیس اہلکار پر الزام ہے کہ اس کے پاس اختیار تھا کہ وہ گاڑی کو روکنے کے لیے اس کے ٹائروں پر فائرنگ کرسکتا تھا تاکہ لوگوں کی جان و مال کو نقصان نہ پہنچ سکے مگر اہلکار نے فائرنگ سے گریز کیا۔

پولیس ترجمان کا مزید کہنا تھا کہ پولیس اہلکار کے خلاف وسیع تر تحقیقات کے احکامات صادر ہوچکے ہیں تفتیشی کمیٹی کی جانب سے رپورٹ پیش ہونے پر عدالتی کارراوئی کے لیے بھیجا جائے گا۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز ریاض میں سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیو جس میں ایک شخص کو مخالف سمت میں گاڑی چلاتے ہوئے جان بوجھ کرسامنے سے آنے والی گاڑیوں کو ٹکر مارتے ہوئے دکھایا گیا تھا۔

ملزم کے بارے میں پولیس کا کہنا تھا کہ حادثے میں استعمال ہونے والی گاڑی مسروقہ تھی جس کی رپورٹ تھانے میں درج تھی۔

واضح رہے کہ رانگ سائیڈ ڈرائیونگ حادثے میں ملزم نے11 گاڑیوں کو ٹکر ماری جبکہ اس کی اس حرکت سے دیگر راہگیروں کی جان کو بھی شدید خطرہ لاحق تھا۔

ملزم کے بارے میں ابتدائی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ اس کی حالت درست نہیں تھی وہ گرفتاری کے وقت نشے کی حالت میں تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں