سعودی عرب نے حوثی باغیوں کے خلاف سلامتی کونسل میں ثبوت پیش کردیئے
The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب نے حوثی باغیوں کے خلاف سلامتی کونسل میں ثبوت پیش کردیئے

ریاض : سعودی عرب نے سلامتی کونسل میں حوثیوں کے خلاف سعودی عرب کی شہری آبادی پر میزائل داغنے کے ثبوت پیش کرتے ہوئے حوثی باغیوں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سعودی عرب کے حکام کی جانب سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو حوثی باغیوں کے خلاف خط ارسال کیا گیا ہے جس میں یمن سے سعودی شہریوں اور الحدیدیہ کے اسپتالوں کو نشانہ بنانے کے ثبوت پیش کیے گئے ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ میں تعینات سعودی عرب کے مستقل مندوب عبداللہ المعلمی کے ذریعے پہنچائے جانے والے پیغام میں ریاست نے مطالبہ کیا تھا کہ حوثی جنگنجوؤں ملیشیاء کے خلاف فوری کارروائی کرکے ان سے اسلحہ لیا جائے۔

عرب میڈیا کا کہنا تھا کہ سعودی حکومت نے یمن میں آئینی حکومت کی حمایت میں عرب اتحاد قائم کیا تھا، عرب اتحاد کے ترجمان ترکی المالکی نے کہا ہے کہ الحدیدہ شہر پر داغے گئے مارٹر گولے حوثیوں کی جانب سے تھے۔

عرب اتحاد کے ترجمان کا کہنا تھا کہ حوثیوں باغیوں کی جانب سے درجنوں یمنی شہریوں نشانہ بنایا تھا جس کا الزام عرب اتحاد پر لگایا تھا، عرب اتحاد نے یمنی شہریوں پر کوئی بمباری نہیں کی۔

خیال رہے کہ سعودی اتحادی افواج اور یمن کی سرکاری فوج کی جانب سے یمنی بندر گاہ الحدیدہ پر گذشتہ ماہ سے ایک بڑا آپریشن جاری ہے جس کا مقصد حوثی باغیوں کو بندرگاہی شہر سے خالی کرانا ہے۔

واضح رہے کہ یمن میں سعودی عرب کے اتحادی افواج کی جانب سے جاری آپریشن میں اب تک 145 حوثی باغی ہلاک جبکہ متعدد گرفتار ہوچکے ہیں، ہلاک حوثی باغیوں کی لاشیں مقامی اسپتال کے سرد خانے میں موجود ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں