The news is by your side.

Advertisement

شیخ خلیفہ بن زاید النہیان نے دو خواتین کو وفاقی عدالت میں جج تعینات کردیا

خدیجہ المالاس اور راشد الکتبی پہلی اماراتی خواتین ہیں جنہیں وفاقی عدالت میں جج تعینات کیا گیا ہے

ابوظبی : متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان اماراتی تاریخ میں پہلی مرتبہ دو خواتین کو وفاقی عدالت میں جج تعینات کردیا۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کے صدر و ابوظبی کے حاکم شیخ خلیفہ بن زاید النہیان نے 2019 کا 27 واں وفاقی حکم نامہ جاری کرتے ہوئے دو خاتون قانون دان خدیجہ اور سلامہ راشد کو وفاقی عدالت میں جج لگا دیا۔

اماراتی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ جج خدیجہ خامس خلیفہ المالاس اور سلامہ راشد الکتبی متحدہ عرب امارات کی پہلی خواتین ہیں جنہیں وفاقی عدالت میں جج کے فرائض سونپے گئے ہیں۔

View this post on Instagram

. أصدر صاحب السمو الشيخ #خليفة_بن_زايد آل نهيان رئيس الدولة “حفظه الله” المرسوم الاتحادي رقم 27 لسنة 2019 بتعيين القاضي خديجة خميس خليفة الملص، والقاضي سلامة راشد سالم الكتبي في القضاء الاتحادي. . ونص القرار على تعيين خديجة خميس خليفة الملص في وظيفة قاضي استئناف، وسلامة راشد سالم الكتبي في وظيفة قاضي ابتدائي وذلك في المحاكم الاتحادية. . #الإمارات #رؤية_الإمارات #عين_في_كل_مكان

A post shared by رؤية الإمارات Emirates Vision (@evisionmn) on

مقامی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ متحدہ عرب امارات کی حکومت کی جانب سے خواتین ججز کی وفاقی عدالت میں تعینات کا مقصد خواتین کو بااختیار کرنا ہے تاکہ مملکت کی تعمیر و ترقی میں لازمی و کامل کردار ادا کرسکیں۔

متحدہ عرب امارات کے نائب صدر و وزیر اعظم شیخ محمد بن راشد المکتوم نے اماراتی خواتین کی کامیابیوں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اس کا مقصد وفاقی عدالتی نظام میں خواتین کی تعداد کو بڑھانا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں