The news is by your side.

سوشل میڈیا کے استعمال سے بزرگ افراد کو کیا فائدہ ہوسکتا ہے؟

سوشل میڈیا آج کل کے زمانے میں جسمانی و دماغی صحت، سماجی زندگی اور رشتوں کو متاثر کرنے والی بڑی وجہ ہے، تاہم ایک تحقیق سے پتہ چلا کی سوشل میڈیا کا استعمال بڑی عمر کے افراد کے لیے خاصا فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے۔

بین الاقوامی ویب سائٹ کے مطابق جانز ہاپکنز یونیورسٹی اسکول آف میڈیسن کے تحت کی جانے والی ایک طویل مدتی تحقیق کے مطابق بنیادی مواصلاتی ٹیکنالوجی سماجی نتہائی کا مقابلہ کرنے کا ایک بہترین ذریعہ ہے، اس طرح تنہائی کی صورت میں ڈیمنشیا میں مبتلا ہونے سے بچا جاسکتا ہے۔

ماہرین اور سائنسدان الزائمر اور ڈیمنشیا کی صورت میں یاداشت میں ہونے والے نقصان کو کم کرنے کے لیے مسلسل جدوجہد کر رہے ہیں تاکہ کسی طرح اس مرض میں مبتلا مریضوں کی یادداشت کو بہتر بنایا جاسکے۔

یہ مرض عموماً 60 برس سے زائد عمر کے افراد کو متاثر کرتا ہے۔

دیکھا گیا ہے کہ اس عمر کے افراد اکثر تنہا زندگی گزار رہے ہوتے ہیں، تاہم مختلف قسم کی ٹیکنالوجی کا استعمال جیسے سوشل میڈیا ان کے لیے ایک طرح سے سماجی رابطے کی راہ ہموارکرتا ہے جس سے ان کی تنہائی کم ہوتی ہے اور یوں یہ ڈیمنشیا سے بچے رہتے ہیں۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ اگر عمر رسیدہ افراد کی تنہائی کو دور کرنے کے لیے سادہ سی مداخلت بھی جائے تو وہ کارآمد ثابت ہوسکتی ہے۔

اس حوالے سے کیے جانے والے دو مطالعات میں دیکھا گیا کہ ایسے افراد جن کے پاس کسی بھی قسم کی کوئی ٹیکنالوجی یا ٹول نہیں تھا، جس سے وہ دوسروں کے ساتھ رابطہ رکھتے یا ان کے پیغام کا جواب دیتے ان میں وقت گزرنے کے ساتھ ڈیمنشیا کا خطرہ نہ صرف بڑھنے لگا بلکہ وہ اس مرض میں مبتلا بھی ہوگئے۔

دوسری جانب ایسے افراد جو رابطے کے لیے کسی ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے تھے اور لوگوں کے ساتھ پیغامات کا تبادلہ بھی کرتے تھے، وہ عمر بڑھنے کے باوجود ڈیمنشیا سے محفوظ رہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں