اسٹیٹ بینک: امپورٹرز کیلئے نیا حکم نامہ جاری، اشیا مہنگی ہونے کا خدشہ State Bank
The news is by your side.

Advertisement

امپورٹرز کیلئے نیا حکم نامہ جاری، متعدد اشیا مہنگی ہونے کا امکان

اسلام آباد: مختلف اشیا درآمد کرنے والے تاجروں کے لیے بری خبر سامنے آگئی،اسٹیٹ بینک نے مخصوص اشیا کی درآمد پر سو فیصد کیش مارجین جمع کرانے کی شرط عائد کردی، موبائل فون، سگریٹ، ہوم اپلائنسز، جیولری، کاسمیٹکس، اسلحہ اور دیگر اشیا مہنگی ہونے کا امکان ہے۔

تفصیلات کے مطابق اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے بینک گارنٹی ختم کرتے ہوئے مخصوص اشیا بیرون ملک سے یہاں منگوانے پر سو فیصد کیش مارجین جمع کرانے کی شرط عائد کردی ہے۔

اے آر وائی نیوز کے نمائندہ کراچی رضوان عامر کے مطابق اسٹیٹ بینک نے اچانک یہ حکم نامہ جاری کیا ہے جس کے تحت موبائل فون، سگریٹ، جیولری، کاسمیٹکس، الیکٹرک آئٹمز، ہوم اپلائنسس، آرمز اینڈ ایمونیشن و دیگر اشیا درآمد کرنے والوں کو سو فیصد کیش مارجین بینک میں جمع کرانا ہوگا۔

رپورٹر نے بتایا کہ سوفیصد کیش مارجین کا مطلب یہ ہے کہ جتنی مالیت کی اشیا بیرون ملک سے یہاں منگوائی جائیں گی اتنی ہی مالیت اسٹیٹ بینک میں جمع کرانی ہوگی۔

قبل ازیں قانون یہ تھا کہ امپورٹرز اشیا درآمد کرتے تھے تو بینک انہیں گارنٹی فراہم کردیتا تھا جسے عرف عام میں بینک گارنٹی بھی کہا جاتا ہے ، امپورٹر آہستہ آہستہ ادائیگی کرتا رہتا تھا تاہم اب ایسا نہیں ہوگا کیوں کہ اب سیکڑوں اشیا منگوانے سے قبل ہی سو فیصد کیش مارجین بینک میں جمع کرانا ہوگا۔

امپورٹرز اس فیصلے سے شدید پریشان ہوگئے ہیں، تاجروں کا کہنا ہے کہ اس حکم نامے سے ہمارا زیادہ سرمایہ اس عمل میں پھنسا رہا ہے، جس کا براہ راست اثر قیمت پر پڑے گا نتیجے میں یہ اشیا مہنگی ہوں گی، ایسا لگتا ہے کہ منی بجٹ آگیا ہے۔

چھوٹے تاجروں نے شکوہ کیا ہے کہ اس حکم نامے سے ہماری مشکلات بڑھ گئیں، ہمارا کام کرنا مشکل ہوجائےگا۔


ایک امپورٹر احمد شمسی نے اے آر وائی کو بتایا کہ ایف بی آر اور اسٹیٹ بینک کی جانب سے جو اصلاحات کی جارہی ہیں اس کا نقصان براہ راست عوام کو پہنچ رہا ہے کیوں کہ کسی بھی شے کی لاگت بڑھنے پر امپورٹر اسے اشیا کی قیمت میں شامل کردے گا جس سے اشیا مہنگی ہوں گی اور عوام کو مشکلات کا سامنا ہوگا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں