The news is by your side.

Advertisement

آپ کے سر، گردن اور کندھوں میں درد کی وجہ آپ کا اسمارٹ فون تو نہیں؟

کراچی: طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ اسمارٹ فون کے بے تحاشہ استعمال سے ہر عمر کے افراد میں ٹیکسٹ نیک سنڈروم کی شرح بہت زیادہ بڑھ گئی ہے، انہوں نے اس میں کمی کے لیے کچھ احتیاطی تدابیر بھی تجویز کی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق اے آر وائی نیوز کے مارننگ شو باخبر سویرا میں آرتھو پیڈک سرجن ڈاکٹر تحسین ریاض نے شرکت کی اور موبائل فون سے ہونے والے طبی نقصانات کے بارے میں بتایا۔

ڈاکٹر تحسین کا کہنا تھا کہ آج کل کے نوجوانوں میں ٹیکسٹ نیک سنڈروم کی شرح بہت زیادہ بڑھ گئی ہے، اس کی وجہ گردن جھکا کر موبائل فون کا گھنٹوں تک استعمال ہے۔

انہوں نے بتایا کہ گردن کا قدرتی پوسچر ایسا ہے کہ کانوں کو کندھوں کی سطح پر رکھا جائے، جب کوئی ڈیوائس استعمال کرنے کے لیے گردن کو جھکایا جاتا ہے تو گردن کے مسلز پر دباؤ پڑتا ہے اور ان میں سوزش پیدا ہوتی ہے۔

ڈاکٹر تحسین کے مطابق اس کی وجہ سے سر، آنکھوں، کندھوں، گردن، ریڑھ کی ہڈی، اور بعض اوقات بازوؤں میں بھی درد ہونے لگتا ہے۔ موبائل فون کو استعمال کرتے وقت گردن جھکا لینے کی پوزیشن کو کچھوے والی پوزیشن بھی کہا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر موبائل فون یا دیگر ڈیوائسز کو معمولی وقت کے لیے استعمال کیا جائے تو ان تکالیف سے بچا جاسکتا ہے تاہم آج کل نوجوان رات رات بھر جاگ موبائل فون استعمال کرتے ہیں جس سے وہ بے خوابی کا بھی شکار ہوجاتے ہیں۔

ڈاکٹر تحسین نے کہا کہ اس تکلیف سے بچنے کے لیے دوا کرنے سے قبل احتیاطی تدابیر اپنائی جانی ضروری ہیں۔ سب سے پہلے تو کوشش کریں کہ ڈیوائس کو آنکھوں کے لیول پر لے کر آئیں گردن کو نہ جھکائیں۔

دفاتر میں کام کرنے والے افراد ہر آدھے گھنٹے بعد وقفہ لیں اور گردن کو حرکت دیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ کھڑے ہو کر کبھی بھی کام نہ کریں کیونکہ اس سے گردن میں پڑنے والے دباؤ میں اضافہ ہوتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں