The news is by your side.

Advertisement

وینزویلا بحران، امریکا نے پابندیوں کا فیصلہ کرلیا

واشنگٹن: وینزویلا میں جاری سیاسی بحران کے پیش نظر امریکی انتظامیہ نے وینزویلا کے مرکزی بینک اور اس کے سربراہ الیانا جوزفا روزا تیران پر پابندیاں لگانے کا فیصلہ کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق امریکا کی وزارت خزانہ نے غیر آئینی مادورو انتظامیہ کے ہاتھ میں کٹھ پتلی بننے سے بچانے کے لیے وینزویلا کے مرکزی بینک پر پابندیاں لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ مادورو انتظامیہ ونزویلا کے اثاثوں کو سمیٹنا اور بدعنوان حکومتی افراد کو دولت مند بنانے کے لیے حکومتی اداروں کو لوٹنا جاری رکھے ہوئے ہے۔

امریکی محکمہ خزانہ کے جاری کردہ بیان میں مرکزی بینک کے سربراہ تیران کو بھی پابندیوں کے احاطے میں لیے جانے کا ذکر کیا گیا ہے۔

دریں اثنا وائٹ ہاوس کے مشیر برائے قومی سلامتی جون بولٹن نے میامی میں ایک تقریب میں شرکت کے دوران جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ ہم نے وینزویلا، کیوبا اور نکاراگوا پر پابندیاں لگانے کا فیصلہ کرچکے ہیں۔

بولٹن نے مذکورہ تین ممالک کو سوشلزم کے آلہ کار قرار دیتے ہوئے کہا کہ وینزویلا کے مرکزی بینک کے سربراہ کے ساتھ نکاراگوا کے صدر ڈینئیل اور ٹیگا کو خفیہ ادائیگیوں کے دعوے کے ساتھ مالی خدمات فراہم کرنے والی فرم بینکورپ پر بھی پابندیاں لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔

سیاسی ومعاشی بحران، ریڈکراس کی امدادی ٹرک وینزویلا پہنچ گئی

ان کا مزید کہنا تھا کہ ٹرمپ انتظامیہ امریکا میں مقیم کیوبا کے شہریوں کو اپنے عزیزو اقارب کو ایک متعینہ مقدار تک رقوم بھیجنے کی اجازت دے گی اور ایک شخص سال کی ایک تہائی میں زیادہ سے زیادہ ایک ہزار ڈالر کیوبا بھیج سکے گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں