The news is by your side.

Advertisement

کرونا سے بچاؤ کی گولی، قیمتوں سے متعلق اعلان

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کرونا سے بچاؤ کے لئے تیار کی گئی گولیوں کی مجموعی خوراک کی قیمت کم سے کم رکھنے کا خواہاں ہے۔

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کے اندرونی دستاویزات میں کہا گیا ہے کہ ادارے کی کرونا سے تحفظ کی گولیوں کی مجموعی خوراک کی قیمت سترہ سو روپے پاکستانی یعنی 10 امریکی ڈالر تک رکھنے کا خواہش ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی نے اپنی خصوصی رپورٹ میں بتایا کہ عالمی ادارہ صحت کے پروگرام ’ایکسس ٹو کووڈ 19 ٹولز‘ (اے سی ٹی اے) کے دستاویزات کے مطابق امیر ملکوں کی جانب سے کرونا ویکسین خریدے جانے کی وجہ سے غریب ممالک تاحال وبا سے تحفظ کی دوا سے محروم ہیں، جس کی وجہ سے انہیں سستی اور ترجیحی بنیادوں پر دوا فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔

مذکورہ دستاویزات تاحال ڈرافٹ ہیں اور انہیں آئندہ ماہ روم میں ہونے والے دنیا کے امیر ممالک (جی ٹوئنٹی) کے اجلاس میں پیش کیا جائے گا تاکہ امیر ممالک سے فنڈز حاصل کیے جاسکیں۔

عالمی ادارہ صحت کا منصوبہ ہے کہ دنیا کے تمام امیر ممالک ایکسس ٹو کووڈ 19 ٹولز کے منصوبے کے لیے مجموعی طور پر 22 ارب ڈالر سے زائد کی رقم عطیہ کریں تاکہ ستمبر دو ہزار بائیس تک غریب ممالک تک کرونا سے تحفظ کی سستی دوا اور ٹیسٹ کٹس بھجوائی جائیں۔

یہ بھی پڑھیں: ماہرین کی کرونا کی ڈیلٹا اور ڈیلٹا پلس اقسام سے متعلق خوفناک دریافت

دستاویزات میں کسی گولی کا نام نہیں لکھا گیا اور یہ بھی نہیں بتایا گیا کہ بعض فارماسیوٹیکل کمپنیاں مزید گولیاں بنانے میں مصروف ہیں۔

عالمی ادارہ صحت کی جانب سے گولیوں کی قیمت کے تعین سے متعلق دستاویزات کی خبر ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب کہ رواں ماہ کے آغاز میں دو امریکی کمپنیوں کے کرونا سے تحفظ کی گولیوں کے حوصلہ افزا نتائج سامنے آئے تھے۔

مذکورہ کمپنیوں کی جانب سے کرونا کے تحفظ کے لیے بنائی گئی اینٹی وائرل گولیوں کو ’مولنو پراور‘ کا نام دیا گیا ہے۔

امریکی کمپنیوں مرک اور ریجبیک بائیو تھراپیوٹیکس نے یکم اکتوبر کو بتایا تھا کہ ان کی گولیوں کے نتائج حوصلہ افزا ہیں، جن سے معلوم ہوتا ہے کہ گولیاں کرونا کے مریضوں میں موت کی شرح کو پچاس فیصد تک کم کردیتی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں