The news is by your side.

Advertisement

“چانسلر” کے بارے میں‌ جانیے

یہ تو شاید ہم سبھی جانتے ہیں کہ لفظ “چانسلر” کسی ریاست کے عظیم عہدے دار، کسی محکمے اور ادارے کے منتظمِ اعلیٰ کے لیے برتا جاتا ہے، لیکن ہمارے ملک میں‌ خاص طور پر یہ لفظ جامعات کے منتظم اور مختار کی حد تک محدود ہے، جب کہ جرمنی کی بات کریں‌ تو وہاں یہ لفظ نظامِ حکومت سے جڑا ہوا ہے اور سربراہِ مملکت کے لیے استعمال ہوتا ہے۔

زبان و بیان کے ماہر اور تاریخ‌ پر نظر رکھنے والوں کے مطابق قدیم زمانے میں‌ روم کے کسی عظیم لیڈر اور عہدے دار کو چانسلر بولا اور لکھا جاتا تھا۔ اسی طرح‌ برطانوی نظام میں بھی یہ ایک عہدے کے لیے برتا جاتا رہا ہے۔ جامعات کا ناظم تو اکثر ممالک میں‌ چانسلر ہی کہلاتا ہے۔

اکثر الفاظ کے پیچھے کوئی نہ کوئی کہانی چھپی ہوئی ہے، حیرت انگیز، دل چسپ، سادہ، لطیف اور شاید یہ بہت بھونڈی بھی ہو سکتی ہے، لیکن ہم اس طرف توجہ نہیں‌ دیتے۔

ڈاکٹر سید حامد حسین ان لوگوں‌ میں‌ سے ہیں جنھوں‌ نے الفاظ کے اسرار اور بھید جاننے کی کوشش کی ہے اور حرف حرف کرید کر جو کچھ جان سکے اسے ہمارے سامنے رکھا ہے۔

معروف قلم کار، محقق اور مترجم ڈاکٹر سید حامد حسین نے اپنی کتاب لفظوں‌ کی انجمن میں‌ “چانسلر” کے بارے میں‌ لکھا ہے:

“چانسلر لفظ لاطینی زبان سے آیا ہے۔ اصل معنی ”کیکڑے“ ہیں۔ بعد میں اس سے ایک اور لفظ بانس، لکڑی یا لوہے کی جالی کے لیے بنایا گیا۔ یہ جالیاں گرجا میں ہوتی تھیں جو اس حصے کو علیحدہ کرتی تھیں جہاں پادری بیٹھتا تھا۔ چانسلر کا لفظ سب سے پہلے اس دربان کے لیے استعمال ہوا جو گرجا میں قائم عدالت کے باہر جالی کے پاس بیٹھتا۔ پھر اسے عدالتوں کے چپراسی کے لیے بولنے لگے۔ بعد میں عدالت کے سیکریٹری اور نوٹری کو اس نام سے پکارنے لگے۔”

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں