جرمنی میں مہاجر مخالف حملوں میں کمی واقع ہوئی: جرمن وزارت خارجہ: Germany
The news is by your side.

Advertisement

جرمنی میں مہاجر مخالف حملوں میں کمی آئی ہے: جرمن وزارت داخلہ

برلن: جرمن وزارت داخلہ کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ جرمنی میں مہاجرین مخالف حملوں میں کمی واقع ہوئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق جرمنی میں مہاجرین کے خلاف سخت رویہ رکھا جاتا تھا اور انہیں حملوں کا بھی نشانہ بنایا جاتا تھا تاہم ماضی کے مقابلے میں مذکورہ حملوں میں کمی واقع ہوئی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق جرمن وزارت داخلہ کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رواں سال کی پہلی ششماہی کے دوران مہاجرین یا تارکین وطن افراد پر حملوں کی تعداد 627 رہی جبکہ مراکز پر کیے جانے والے ان حملوں کی تعداد 77 رہی۔

وزارت خارجہ کے مطابق گزشتہ برس ان حملوں کی تعداد تقریباً دو ہزار دو سو کے قریب رہی تھی جبکہ سن دو ہزار سولہ میں ایسے ساڑھے تین ہزار سے زائد واقعات رونما ہوئے تھے۔


جرمنی سے معاہدہ، اسپین تارکین وطن کو واپس لینے کے لیے راضی


دوسری جانب ماہرین کا کہنا ہے کہ ایسے نسل پرستانہ حملوں میں کمی واقع ہونا خوش آئند ہے اور خطے کے لیے بھی بہت اہم ہے، مستقبل میں مثبت نتائج نکلیں گے۔

علاوہ ازیں تارکین وطن کے معاملے پر جرمن چانسلر کا مؤقف ہے کہ جرمنی اور اسپین تارکین وطن سے متعلق بحران کو حل کرنے کے لیے تعاون جاری رکھیں گے اور دونوں ممالک کے درمیان ہونے والا معاہدہ مہاجرین کے حوالے سے اہمیت کا حامل ہے۔

خیال رہے کہ جرمنی کی چانسلر اینجیلا مرکل نے گذشتہ روز اسپین کے وزیر اعظم سے ہسپانوی شہر شلوقہ میں ملاقات کی تھی اور یورپ کو غیر قانونی تارکین وطن کے حوالے سے درپیش مسائل کی طرف نشاندہی بھی کی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں