site
stats
عالمی خبریں

جکارتہ، ہم جنس پرست جوڑے کو سرعام لاٹھیاں مارنے کی سزا

جکارتہ : انڈونیشیا کی شرعی عدالت نے دو ہم جنس پرست مردوں کو سرعام 85 لاٹھیاں مارنے کا حکم دیا جس پر عمل درآمد آئندہ ہفتے کیا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق انڈونیشیا کے صوبہ آچہ کی عدالت نے 20 اور 23 سال کے نوجوانوں کو آپس میں جنسی تعلقات رکھنے کی پاداش میں 85 ڈنڈے مارنے کا حکم دیا، دونوں نوجوانوں کو مارچ کے آخر میں بندا آچہ سے گرفتار کیا گیا تھا۔

چیف پراسیکیوٹر گلمائنی کا کہنا تھا کہ ان نوجوانوں کی سزاوں پر عملدرآمد آئندہ ہفتے ماہ رمضان سے قبل ہی کیا جائے گا اور عدالتی حکم کی پاسداری کرتے ہوئے نوجوانوں کو سر عام سزا کے لیے متعین مخصوص لاٹھیاں ماری جائیں گے۔

خیال رہے انڈونیشیا میں کوڑوں کے بجائے لاٹھیاں مارنے کا رواج ہے اور مجرموں کو سزا دینے کے لیے مخصوص قسم کی لاٹھیاں تیار کی جاتی ہیں جو باریک، لچکدار اور تیزدھار ہوتی ہے جن سے مجرموں کے اعضاء پر ضرب لگائی جاتی ہے۔

دوسری جانب ہیومن رائٹس واچ نے سرعام کوڑے یا لاٹھیاں مارنے کی سزاؤں کو غیر انسانی قرار دیتے ہوئے اسے بین الاقوامی قوانین سے متصادم کہا اور سزاؤں کے لیے دیگر طریقوں کے استعمال پر زور دیتے ہوئے دونوں نوجوانوں کی رہائی کا مطالبہ بھی کیا۔

انڈونیشین پولیس حکام کا کہنا ہے کہ انڈونیشیا اپنے آئین اور قانون کے تحت مجرموں سے نمٹنے کا پورا حق رکھتا ہے یہ ایک اسلامی ملک ہے جہاں ہم جنس پرستی ممنوع ہے اور جو کوئی اس جرم میں مرتکب پائے گا سزا کا حق دار ہوگا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top