The news is by your side.

Advertisement

سندھ میں لاک ڈاؤن، شہری صبح ہی سے سڑکوں پر آ گئے

لوگ گھر پر نہیں رہے تو حکومت کو کرفیو لگانا پڑے گا: وزیر اطلاعات سندھ

کراچی: شہر میں لاک ڈاؤن کا دوسرے روز ہی بریک ڈاؤن ہو گیا، شہریوں کا انتہائی غیر ذمہ دارانہ رویہ دیکھنے میں آ رہا ہے، کرونا وائرس سے متعلق آگاہی مہم کے باوجود عوام نے لاک ڈاؤن کے لیے حکومتی احکامات کو ہوا میں اڑا دیا، صبح ہوتے ہی سڑکوں پر نکل آئے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی شہر میں جگہ جگہ پولیس اور رینجرز کے ناکے لگے ہیں لیکن شہری بھی نہیں مانے اور گاڑیوں، موٹر سائیکلوں پر سوار ہو کر سڑکوں پر نکل آئے۔

ٹریفک پولیس اہل کار لوگوں کو گھروں کو جانے کی تاکید کرتے رہے لیکن کوئی نہیں مانا، ڈبل سواری پر پابندی پر بھی عمل درآمد نہ ہو سکا، کئی مقامات پر گاڑیوں کا تانتا بندھا رہا، ایک رکشے میں کئی کئی شہری سوار ہونے کے جتن کرتے دکھائی دیے۔ گلی محلوں میں بھی صورت حال مختلف نہیں، شہریوں کی معمول کی بیٹھکیں لگی ہوئی ہیں، خواتین اور بچے بھی گھروں سے باہر نظر آئے۔

اہم شاہراہوں پر گاڑیاں، موٹر سائیکلوں اور رکشوں پر شہریوں کو دیکھا جا سکتا ہے، خیال رہے کہ سندھ حکومت کی جانب سے 15 دن کے لاک ڈاؤن کا اعلان کیا گیا ہے، سندھ پولیس اور رینجرز کی جانب سے مختلف شاہراہوں پر رکاوٹیں لگا دی گئی ہیں، تاہم شہر کی ہر قابل ذکر شاہراہ پر شہریوں کی کثیر تعداد کی نقل و حرکت جاری ہے۔ اب تک کراچی پولیس نے 246 شہریوں کو دفعہ 144 کی خلاف ورزی پر گرفتار کیا ہے، جب کہ سندھ بھر میں 748 افراد کو گرفتار کیا گیا۔

لاک ڈاؤن کی خلاف ورزیوں پر سندھ بھر میں گرفتاریاں

کراچی میں ساؤتھ زون میں 161 افراد، ایسٹ زون میں 60 اور ویسٹ زون میں 25 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔ حیدرآباد میں 28، میرپورخاص 27، سکھر 73، جب کہ لاڑکانہ میں 374 افراد کو دفعہ 144 کی خلاف ورزی پر گرفتار کیا گیا۔ مجموعی طور پر صرف 132 افراد کے خلاف مقدمہ درج نہیں کیا گیا۔

دوسری طرف وزیر اطلاعات سندھ ناصر حسین شاہ نے خبردار کر دیا ہے کہ جو لوگ لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی کر رہے ہیں وہ ہمیں سخت اقدامات کی طرف لے کر جا رہے ہیں، لوگ نہ مانے تو سیکورٹی اداروں کو سختی کرنا پڑے گی، چھٹیاں باہر گھومنے کے لیے نہیں، عوام کو گھروں میں رہنا پڑے گا۔ انھوں نے کہا کہ عوام سے سختی کرنا پڑی تو پیشگی معذرت کرتا ہوں، لوگ گھر پر نہیں رہے تو حکومت کو کرفیو لگانا پڑے گا۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں