The news is by your side.

Advertisement

عراق ایک بار پھر مٹی کے طوفان کی زد میں، نظام زندگی متاثر

بغداد: ایک ہفتے کے وقفے سے عراق میں آنے والے ریت کے طوفان نے نظام زندگی درہم برہم کردیا ہے۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق عراق میں ریت کے شدید طوفان کے نتیجے میں بغداد کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر فلائٹ آپریشن روک دیا ہے جبکہ متعدد سرکاری اسکولوں اور دفاتر کو بند کردیا گیا ہے۔

ایئرپورٹ حکام کے مطابق اگلے نوٹس کی تعمیل تک یہ فلائٹ آپریشن معطل رہےگا۔

طبی حکام نے بتایا کہ دارالحکومت اور جنوبی شہروں میں سینکڑوں افراد کو سانس لینے میں دشواری کے باعث اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے، صحت کی حکام کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ ابھی تک 75 افراد کو سانس میں تکلیف کے باعث طبی امداد دے کر فارغ کردیا ہے، اگر یہ تعداد زیادہ بڑھتی ہے تو آکسیجن مشینوں سے ان کا علاج کرینگے۔

گذشتہ ہفتے بھی دارالحکومت بغداد سمیت مختلف شہروں میں مٹی کے طوفان کے باعث آسمان نارنجی اور پیلے رنگ میں تبدیل ہوگیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: عراق میں مٹی کا طوفان ، آسمان نارنجی رنگ میں تبدیل

وزیر ماحولیات نے وارننگ دی تھی کہ عراق کو دو سو بہتر دنوں تک مٹی کے طوفان کا سامنا کرنا پڑسکتاہے۔

اقوام متحدہ کے مطابق عراق موسمیاتی بحران کے حوالے سے عراق دنیا کا پانچواں کمزور ترین ملک ہے، خشک سالی اور شدید درجہ حرارت کھیتی باڑی کو خشک کر رہا ہے جبکہ گرمیوں کے موسم میں عراق کے بڑے شہروں میں رہنا محال ہوگیا ہے، ملک میں حالیہ برسوں میں کم از کم 52 ڈگری سیلسیس درجہ حرارت ریکارڈ کیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں