The news is by your side.

Advertisement

شاہد کپور مہاراجہ بن کر کیسے لگیں گے؟

مشہور تاریخی بالی ووڈ فلم باجی راؤ مستانی کے بعد ہدایت کار سنجے لیلا بھنسالی کی ایک اور تاریخی موضوع پر بنائی جانے والی فلم پدما وتی میں مرکزی کردار ادا کرنے والی دپیکا پڈوکون کے بعد شاہد کپور کی بھی جھلک جاری کردی گئی جس میں وہ مہاراجا کے روپ میں نظر آرہے ہیں۔

سنجے لیلا بھنسالی کی فلم ’پدما وتی‘ خاندان غلاماں کے بادشاہ علاؤ الدین خلجی اور چتور گڑھ کی رانی پدما وتی کی رومانوی داستان پر مبنی ہے۔

فلم میں رانی پدمنی کے شوہر مہاراجہ رتن سنگھ کا کردار شاہد کپور ادا کر رہے ہیں اور اس روپ میں ان کی کچھ جھلکیاں جاری کردی گئی ہیں۔

خیال رہے کہ پوسٹر میں رتن سنگھ کو مہاراول لکھا گیا ہے جو اس دور میں مختلف ریاستوں کی سربراہی کرنے والے کو کہا جاتا تھا۔ سلطنت کا مرکزی نظام سنبھالنے والا مہاراجہ کہلایا جاتا تھا۔

اس کردار کے لیے پہلے پاکستانی اداکار فواد خان اور بعد ازاں شاہ رخ خان کو پیشکش کی گئی تاہم دونوں نے کردار کے مختصر ہونے کی وجہ سے اس سے انکار کردیا۔

بعد ازاں مذکورہ کردار کی پیشکش شاہد کپور کو کی گئی جنہوں نے اس شرط پر اسے قبول کیا کہ ان کے کردار کو بھی طول دیا جائے گا۔

یاد رہے کہ مہارانی پدماوتی یا پدمنی چتور گڑھ کے راجہ رتن سنگھ کی بیوی تھی اور اپنی خوبصورتی، بہادری اور ذہانت کے باعث مشہور تھی۔ تاریخی کتابوں کے مطابق علاؤ الدین خلجی اس کی خوبصورتی کی داستانیں سن کر وہاں گیا اور اس نے آئینے میں مہارانی کا عکس دیکھا تھا۔

بعض محققین کے مطابق بعد ازاں رانی نے علاؤ الدین خلجی اور اس کی دیوانگی سے خود کو بچانے کے لیے آگ میں کود کر اپنی جان دے دی تھی۔

فلم میں رانی پدمنی کا مرکزی کردار دپیکا پڈوکون، رانی کے شوہر رتن سنگھ کا کردار شاہد کپور اور علاؤ الدین خلجی کا کردار رنویر سنگھ نبھا رہے ہیں جبکہ ادیتی راؤ بھی فلم میں موجود ہیں جو علاؤ الدین خلجی کی اہلیہ کا کردار نبھائیں گی۔

اس سے قبل دپیکا پڈوکون کا پوسٹر جاری کیا گیا تھا جس میں وہ سرخ رنگ کا شاہی لباس اور بھاری بھرکم زیورات پہنے نظر آرہی تھیں جبکہ ان کے چہرے کی سنجیدگی ان کے مضبوط اور بہادر عورت ہونے کی نشاندہی کر رہی تھی۔

تاحال فلم میں علاؤ الدین خلجی کا مرکزی تاہم منفی کردار ادا کرنے والے رنویر سنگھ کی کوئی جھلک جاری نہیں کی گئی۔

فلم کو رواں برس یکم دسمبر کو ریلیز کیا جائے گا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں