سوئیڈن پولیس نے کھلونا پستول تھامے نوجوان کو قتل کردیاswedish-police-kill-man
The news is by your side.

Advertisement

سوئیڈن پولیس نے کھلونا پستول تھامے نوجوان کو قتل کردیا

اسٹاک ہوم : سوئیڈن کے دارالحکومت میں پولیس افسران نے مبینہ طور پر فائرنگ کر کے کھلونا پستول تھامے نوجوان کو ہلاک کردیا، مقتول کا ذہنی مریض تھا۔

تفصیلات کے مطابق یورپی یونین کے رکن ملک سوئیڈن کے پولیس اہلکاروں نے مبینہ طور پر فائرنگ کرکے آٹزم کے مرض میں مبتلا نوجوان کو گولی مار موت کے گھاٹ اتار، جو کھلونا پستول لے کر گھر سے نکلا تھا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ سوئیڈن کے علاقے اسٹاک ہوم شہر کے وسط میں ایک رہائشی علاقے میں ایک روز قبل فائرنگ کا واقعہ پیش آیا تھا جہاں تین پولیس اہلکاروں نے گھر سے کھلونا پستول لے کر نکلنے والے 20 سالہ شخص پر فائرنگ کردی تھی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہہنا تھا کہ پولیس اہلکاروں کی فائرنگ سے ہلاک ہونے والے نوجوان کی شناخت ایرک ٹوریل کے نام سے ہوئی تھی، جو اپنے اہل خانہ کے ہمراہ سوئیڈن کے دارالحکومت اسٹاک ہوم میں مقیم تھا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ایرک کا دماغی توازن درست نہیں اور اس کے ایک عزیز نے تحفے میں کھلونا پستول دی تھی۔ مقتول ایرک پسوتل لیے جب اپارٹمنٹ سے باہر آیا تو پیٹرولنگ پولیس کے تین افسران نے ایرک کی جانب سے خطرہ محسوس کرتے ہوئے فائرنگ کردی تھی۔

پولیس افسران کی فائرنگ سے زخمی ہونے والے ایرک کو فوری طور پر اسپتال منتقل کیا گیا تاہم وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے راستے میں ہی ہلاک ہوگیا تھا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ رواں برس کے آغاز سے اب تک 7 افراد کی فائرنگ کے نتیجے میں جان کی بازی ہار چکے ہیں، پولیس حکام کی جانب سے تاحال واقعے میں ملوث پولیس افسران کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے البتہ تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔

پولیس کی فائرنگ سے ہلاک ہونے والے نوجوان کی والدہ کا کہنا تھا کہ جمعرات کے روز ایرک شام 4 بجے کے قریب گھر سے گیا تھا جس کے بعد کافی دیر تک ایرک کا کچھ پتہ نہیں چلا، تاہم کئی گھنٹے گزرنے کے بعد پتہ چلا کہ ایرک پولیس کی فائرنگ سے ہلاک ہوگیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں