The news is by your side.

Advertisement

شامی مہاجرین کی مشکلات میں اضافہ

دمشق: شام میں خانہ جنگی کے باعث کیمپوں میں زندگی گزارنے پر مجبور شامی مہاجرین کی مشکلات میں شدید سردی اور برفباری نے مزید اضافہ کردیا۔

اپنے ہی ملک میں پناہ گزینوں کی سی زندگی گزارنے پر مجبور شامی مہاجرین کی مشکلات کم ہونے کے بجائے بڑھتی جا رہی ہیں۔ کیمپوں میں پناہ گزین بچوں، بوڑھوں اور خواتین کو موسم کی شدت کا سامنا ہے۔

مزید پڑھیں: پناہ گزین بچوں کے خواب

شام کے شہر ادلب کے پناہ گزین کیمپوں میں بدترین صورتحال میں زندگی گزارتے افراد نا کافی سہولتوں کے ساتھ شدید سردی اور برفباری کا مقابلہ کرنے پر مجبور ہیں۔

ایک شامی شخص کا کہنا ہے کہ انہیں گھر سے بے گھر ہوئے 2 سال ہوگئے ہیں۔ جہاں کیمپ قائم ہے یہ زرعی زمین ہے اور رہائش کے قابل نہیں لیکن وہ یہاں رہنے پر مجبور ہیں۔ ہم کیمپ کے اور دیگر اخراجات خود اٹھا رہے ہیں۔

مزید پڑھیں: اکیا کا اسٹور شامی خانہ جنگی سے تباہ حال گھر میں تبدیل

اقوام متحدہ کے مطابق پچھلے 5 سال سے جاری شامی خانہ جنگی اب تک 4 لاکھ افراد کی جانیں لے چکی ہے۔

شام اور عراق کے جنگ زدہ علاقوں سے ہجرت کرنے والے افراد کی تعداد تاریخ میں مہاجرین کی سب سے بڑی تعداد ہے اور دنیا نے اس سے قبل کبھی اتنی زیادہ تعداد میں مہاجرین کی میزبانی نہیں کی۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں