بحر اوقیانوس میں 6 منزلہ عمارت جتنی بلند لہر -
The news is by your side.

Advertisement

بحر اوقیانوس میں 6 منزلہ عمارت جتنی بلند لہر

جینیوا: اقوام متحدہ کے زیر نگرانی فعال عالمی ادارہ موسمیات کا کہنا ہے کہ شمالی بحر اوقیانوس میں تاریخ کی بلند ترین لہر دیکھی گئی جو 19 میٹر بلند (62 فٹ سے بھی زائد) تھی اور یہ بلندی ایک 6 منزلہ عمارت جتنی تھی۔

ادارے کی جانب سے جاری کیے جانے والے ڈیٹا کے مطابق یہ خوفناک اور بلند و بالا لہر برطانیہ اور آئس لینڈ کے درمیان واقع سمندر میں دیکھی گئی۔ ادارے کے ڈپٹی چیف وین جنگ زینگ کا کہنا ہے کہ یہ تاریخ میں دیکھی جانے والی بلند ترین لہر ہے۔

wave-2

ڈیٹا کے مطابق 6 منزلہ عمارت جتنی بلند یہ لہر شدید سرد موسم کا نتیجہ تھی جس کے ساتھ 50 میل فی گھنٹہ چلنے والی تیز اور سرد ہوائیں بھی دیکھی گئیں۔

زینگ کا کہنا ہے کہ ہمیں موسموں میں ہونے والی ان تبدیلیوں کو سمجھنے کے لیے سمندروں اور ان کی لہروں کا نہایت درست ریکارڈ رکھنا ہوگا۔ یہ اس لیے بھی ضروری ہے کہ ہم اپنے بحری نقل و حمل کو زیادہ سے زیادہ محفوظ بنا سکیں۔

مزید پڑھیں: دنیا کا دوسرا بڑا سمندر بحر اوقیانوس تیر کر پار کرنے کا عزم

واضح رہے کہ براعظم امریکا کو باقی دنیا سے الگ کرنے والے دنیا کے دوسرے بڑے سمندر بحر اوقیانوس کا شمالی حصہ کینیڈا سے آئس لینڈ تک پھیلا ہوا ہے اور یہ بلند و بالا لہروں کا مرکز ہے۔ سردی کے موسم میں یہاں وقوع پذیر ہونے والے موسمیاتی دباؤ کے باعث تیز ہوائیں شدید طوفانوں میں تبدیل ہوجاتی ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں