شیروانی، سوٹ یا واسکٹ؟ تقریب حلف برداری میں‌ کپتان کا انتخاب کیا ہوگا؟
The news is by your side.

Advertisement

شیروانی، سوٹ یا واسکٹ؟ تقریب حلف برداری میں‌ کپتان کا انتخاب کیا ہوگا؟

الیکشن2018میں پی ٹی آئی کی کامیابی کے بعد جہاں حکومت سازی کے لیے جوڑ توڑ جاری ہے، وہیں یہ موضوع بھی زیر بحث ہے کہ کپتان حلف برداری کی تقریب میں کیا زیب تن کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف نمبر زگیم میں باقی جماعتوں سے آگے نکل گئی ہے۔ پارٹی وفاق کے ساتھ ساتھ پنجاب میں بھی حکومت بنانے کی مضبوط پوزیشن میں ہے۔

ایک جانب جہاں عمران خان سے غیرملکی سفیروں اور سیاست دانوں سے ملاقات کا سلسلہ جاری ہے، وہیں پی ٹی آئی کی کابینہ پر بھی کام ہورہا ہے۔

تقریب حلف برداری بھی ایک ایسا ہی موضوع ہے، جو میڈیا اور سوشل میڈیا پر زیر بحث ہے۔

پہلے پہل کہا جا رہا تھا کہ عمران خان شاید عوام کے سامنے ڈی چوک پر حلف لیں، مگر بعد میں پی ٹی آئی چیئرمین نے اس تجویز کو رد کر دیا۔ اب فیصلہ کیا گیا کہ وہ ایوان صدر میں حلف اٹھائیں گے۔

البتہ قصہ یہیں تمام نہیں ہوتا۔ ابھی یہ مسئلہ حل ہونا باقی ہے کہ عمران خان حلف برداری کی تقریب میں کیا زیب تن کریں گے۔

عام طور سے وزارت عظمیٰ کو شیروانی سے جوڑا جاتا ہے، پی ٹی آئی رہنماؤں سے بھی متعدد بار یہ سوال کیا گیا کہ کیا عمران خان نے شیروانی سلوا لی، جسے وہ ہنس کر ٹال گئے۔

عمران خان کی جناح کپ میں بھی تصاویر بہت وائرل ہوئیں۔ کچھ مداحوں کا خیال ہے کہ خان کو نئے پاکستان کا وزیر اعظم بننے کے لیے جناح کیپ کا انتخاب کرنا چاہیے۔

پی ٹی آئی کے کچھ ووٹرز اپنے کپتان کو سوٹ میں دیکھنے کے خواہش مند ہیں، جب کہ کچھ کا خیال ہے کہ انھیں واسکٹ پہننی چاہیے۔

چند روزقبل پی ٹی آئی کے سینیٹر فیصل جاوید نے ایک غیررسمی گفتگو میں کہا تھا کہ عمران خان کچھ بھی پہن لیں، وہ ٹرینڈ بن جاتا ہے، البتہ وہ سادگی اپنائیں گے۔


عمران خان کے حلف اٹھاتے ہی ن لیگ میں فارورڈ بلاک بن جائے گا: شیخ رشید


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں