site
stats
سائنس اور ٹیکنالوجی

زرافے کی گردن لمبی کیوں ہوتی ہے؟

ہم نے اسکول میں پڑھا ہے کہ دنیا کا لمبا ترین اور لمبی گردن رکھنے والا جانور زرافہ دراصل اپنی غذائی عادات کے باعث اس قد تک پہنچا۔ درختوں کی اونچی شاخوں سے پتے کھانے کے لیے زرافے نے خود کو اونچا کرنا شروع کیا اور ہر نسل پچھلی نسل سے لمبی ہوتی گئی۔ یوں زرافہ دنیا کا لمبا ترین جانور بن گیا۔ لیکن سائنسدانوں کے مطابق ممکنہ طور پر یہ نظریہ غلط ہے۔

حال ہی میں شائع کی جانے والی ایک رپورٹ کے مطابق زرافے کی گردن ممکنہ طور پر جنسی وجوہات کے باعث لمبی ہوئی۔

زرافہ دنیا کا لمبا ترین ممالیہ ہے۔ نر زرافوں کی لمبائی عموماً 5.5 میٹر ہوتی ہے جبکہ مادہ زرافہ اس سے ذرا سی ہی چھوٹی ہوتی ہے۔

g3

ڈارون کے نظریہ ارتقا کے تحت زرافے کی لمبی گردن کا نظریہ یوں پیش کیا گیا کہ دیگر جانوروں سے غذا کے حصول کے لیے لڑائی کے باعث زرافوں نے ان جگہوں پر پہنچنے کی کوشش کی جہاں دوسرے جانور نہیں پہنچ سکتے تھے یعنی درختوں کی اونچی شاخوں تک۔

جب زرافوں نے اس عادت کو اپنا معمول بنا لیا تو ان کے جسم نے آہستہ آہستہ اس عادت سے مطابقت شروع کردی۔

ہر نئے پیدا ہونے والے زرافے میں گردن اور ٹانگوں کی لمبائی میں اضافہ ہوتا گیا۔ اس سے قبل زرافے دیگر جانداروں کی طرح اوسط قد کے تھے اور ان کی ٹانگیں اور گردن بھی عام لمبائی کی حامل تھی۔

یہ ارتقا کئی نسلوں (اندازاً 10 لاکھ سال) تک چلا یہاں تک یہ خصوصیات زرافے کی نسل میں مستقلاً آگئیں۔ یوں کئی نسلوں کا فرق رکھنے والوں زرافوں میں زمین آسمان کا فرق آگیا اور زرافہ دنیا کا لمبا ترین جانور بن گیا۔

g2

مگر ایک امریکی سائنسی جریدے میں شائع ہونے والی تحقیقی رپورٹ کے مطابق زرافے کے جسمانی ارتقا کی وجہ یہ نہیں ہے۔

اس رپورٹ میں ایک ماہر حیوانیات رابرٹ سمنز کا ذکر کیا گیا جس نے 1996 میں ایک تحقیق پیش کی تھی۔ تحقیق کے مطابق زرافے تمام وقت اونچی شاخوں سے نہیں کھاتے تھے۔ جب موسم خشک ہوتا تھا اس دوران وہ زمین پر لگے نباتات سے اپنی بھوک مٹاتے تھے۔

اس تحقیق کو مدنظر رکھتے ہوئے یہ نظریہ پیش کیا گیا کہ ممکن ہے زرافے مادہ زرافوں کے حصول کے لیے آپس میں لڑتے ہوں، لڑنے کے دوران وہ اپنی گردنیں آپس میں بھڑاتے ہوں اور اسی وجہ سے ان کی گردنیں لمبی ہوگئیں۔

رپورٹ میں 1968 میں شائع ہونے والی ایک اور تحقیق کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا کہ نر زرافوں کے سینے سے اوپر کے حصہ کی عجیب ساخت ان کے کسی خاص قسم کی لڑائی میں ملوث ہونے کی نشاندہی کرتی ہے۔

g1

رپورٹ میں بتایا گیا کہ ممکن ہے جن زرافوں کی گردن لمبی ہوتی ہو وہ لڑائی میں جیت جاتے ہوں۔ ایک مشاہدہ یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ مادہ زرافہ بھی ان زرافوں کی جانب زیادہ متوجہ ہوتی ہیں جن کی گردن دوسرے زرافوں سے لمبی ہوتی ہے۔

سائنسدانوں نے اس بات کی تصدیق تو نہیں کی کہ زرافوں کی آپس کی لڑائی صرف مادہ کے حصول کے لیے ہی ہوتی تھی، تاہم وہ اس بات پر متفق ہیں کہ ان کے بیچ کوئی وجہ تنازعہ تھا جس کے باعث یہ آپس میں لڑتے تھے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top