The news is by your side.

Advertisement

ترامیم معاہدہ کامیابی قرار، نامعلوم افراد کو کسی نے لفٹ نہیں کرائی: حافظ نعیم

کراچی: امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمان نے حکومتِ سندھ کے ساتھ ہونے بلدیاتی قانون میں ترامیم کے معاہدے کو کامیابی قرار دیا، انھوں نے کہا ہمارا نقطۂ نظر ذاتی نہیں تھا، یہ ہمارا خلوص تھا کہ کامیابی ملی۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے حافظ نعیم نے کہا ہم شہر اور میئر کے اختیار کے لیے نکلے ہیں، میئر کون بنے گا نہیں جانتے، ابھی بہت سارے معاملات پر مذاکرات ہوتے رہیں گے، ابتدائی دنوں میں حکومت نے دھرنے کو نظر انداز کیا، لیکن ہم فیس سیونگ نہیں بلکہ جدوجہد کو کسی نتیجے پر پہنچانا چاہتے تھے۔

امیر جماعت اسلامی کراچی نے کہا ابھی بھی بہت ساری ایسی چیزیں ہیں جو معاہدے کے تحت بننے والی کمیٹی کے سپرد کی گئی ہیں، کراچی واٹر اور سالڈ ویسٹ مینجمنٹ کا چیئرمین اب میئر ہوگا، لیکن آپ اختیار دے دیں اور پیسہ نہ دیں تو اختیار کا کیا کریں گے۔

حافظ نعیم الرحمان کا کہنا تھا جماعت اسلامی نے 29 دن دھرنا دیا، مذاکرات میں تاخیری حربے استعمال ہوئے، ہمارا مقصد ایک ہی تھا، بلدیاتی اداروں، شہر اور میئر کو اختیارات ملیں۔

سندھ حکومت اور جماعت اسلامی کے درمیان بلدیاتی ترامیم کے معاہدے پر دیگر جماعتیں تشویش میں مبتلا

انھوں نے کہا 2021 کے قانون میں ترمیم کے لیے حکومت تیار ہو گئی ہے، تعلیم و صحت کے ادارے بلدیاتی اداروں کو واپس کیے جائیں گے، سندھ حکومت معاہدے پر عمل کرے گی تو بلدیاتی اداروں کو مالیاتی فائدہ ہوگا، پی ایف سی اے ایوارڈ کاانعقاد کیا جائے گا، موٹر وہیکل ٹیکس کا حصہ بلدیاتی اداروں کو ملے گا۔

حافظ نعیم نے تنقید کرنے والوں کے حوالے سے کہا کہ نامعلوم افراد کو تو کسی نے لفٹ نہیں کرائی ہے، یہ نامعلوم افراد خود اپنی موت آپ مر گئے ہیں، وفاق نے پانی کم کر کے کراچی پر شب خون مارا۔ انھوں نے نام لیتے ہوئے کہا وفاق کا مطلب پی ٹی آئی اور ایم کیو ایم ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں