خطرناک جینز کی موجودگی کے انکشاف کے بعد بندروں کا قتل -
The news is by your side.

Advertisement

خطرناک جینز کی موجودگی کے انکشاف کے بعد بندروں کا قتل

شمالی جاپان کے ایک چڑیا گھر میں 57 بندروں میں غیر معمولی حملہ آور جنیز کی موجودگی کے انکشاف کے بعد انہیں زہر آلود انجکشن دے کر ہلاک کردیا گیا۔

جاپان کے شہر چیبا میں واقع اس چڑیا گھر میں ان بندروں کا ڈی این اے ٹیسٹ کیا گیا جس میں انکشاف ہوا کہ یہ بندر دوغلی نسل کے ہیں اور ان میں پائے جانے والے جینز ان جینزوں سے مختلف ہیں جو ان جیسے دیگر بندروں کے ہیں۔

monkey-2

مکاک نامی یہ بندر جنہیں اسنو منکی بھی کہا جاتا ہے، صدیوں سے جاپان کی سرزمین پر موجود ہیں اور یہ جاپان کے علاوہ کہیں اور نہیں پائے جاتے۔

مزید پڑھیں: پرندوں کو کھانے والی جنگلی بلیوں کے ’قتل‘ کا فیصلہ

دوسری جانب جاپان میں ان بندروں سمیت دیگر مقامی و منفرد حیاتیاتی اقسام کی حفاظت کے لیے دوغلی نسل کے جانوروں کی افزائش پر پابندی عائد ہے۔ دوغلی نسل کے کئی جانوروں کو اس سے قبل بھی ہلاک کیا جاچکا ہے۔

جاپانی ماہرین حیاتیات کے مطابق دوغلی نسل کے جانور مقامی جنگلی حیات کے لیے خطرناک ثابت ہوتے ہیں۔ یہ اکثر اوقات تشدد پسند نکل آتے ہیں جن سے خاص طور پر کمیاب جانوروں کی نسل کے خاتمے کا خدشہ ہوتا ہے۔

monkey-3

چڑیا گھر کی انتظامیہ نے ان بندروں کو ہلاک کرنے پر افسوس اور دکھ کا اظہار کیا اور ان کی باقاعدہ آخری رسومات بھی منعقد کی گئیں، تاہم ان کا کہنا ہے کہ اس طرح کے مختلف جینز کے جانوروں کو ختم کرنا ضروری ہے تاکہ دیگر جنگلی حیات محفوظ رہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں