The news is by your side.

ایک ٹوٹی ہوئی سڑک پر سفر کرتا کہانی کار(تبصرہ)

‎تحریر: آمنہ احسن

محمد جمیل اختر سے پہلا تعارف ان کی ایک مختصر کہانی سے ہوا۔ کہانی، جسے ایک فکشن نگار نے اپنی فیس بک وال پر شیئر کیا تھا۔ وہ کہانی مصنف سے باقاعدہ دوستی کا آغاز ہوا تھا۔ میں نے مصنف کو ایک کم گو اور نفیس انسان پایا، کم الفاظ میں اپنا مدعا بیان کرنے والا  وہ ایک پیدائشی آرٹسٹ۔

آرٹسٹ کا خدا سے، خدا کی بنائی ہر شے سے گہرا تعلق ہوتا ہے۔ محمد جمیل اختر کی کتاب ٹوٹی ہوئی سڑک، جو ان کے افسانوں اور مختصر کہانیوں کی پہلی کتاب ہے، ہاتھ میں آنے اور اسے آخر تک پڑھ لینے کے دوران یہ احساس بار بار ہوتا رہا کہ مصنف کا قدرت سے، اس کی بنائی ہر شے سے اور ارد گرد موجود ہر انسان سے کتنا گہرا تعلق ہے۔

جمیل اختر کے کردار درختوں، پرندوں اور ہواؤں سے باتیں کرتے ہیں۔ خوف اور خاموشی سے ہم کلام ہوتے ہیں۔

آمنہ احسن تبصرہ نگار

مصنف کو کمال حاصل ہے کہ ٹرین کے ٹکٹ چیکر کی کہانی لکھتے لکھتے ایسا سماں باندھ دیتا ہے کہ آپ خود کو اس ٹرین میں بیٹھا ایک مسافر سمجھنے لگتے ہیں۔

جمیل کے لکھے افسانے ہمارے تعفن زدہ معاشرے میں پھیلے مسائل کی عکاسی کرتے ہیں۔ کبھی کبھی ان افسانوں کو پڑھتے پڑھتے افسانے کے کرداروں پر رحم آتا ہے، کبھی ان کی بے بسی پر رونا آتا ہے، کبھی کبھی غصہ آنے لگتا ہے۔

کبھی یوں لگتا، جمیل نے صرف افسردہ اور اداس لوگوں کے بارے میں ہی لکھا ہے، لیکن اپنے ارد گرد جب جمیل کے تراشے کرداروں سے مشابہ انسان چلتے پھرتے نظر اتے ہیں، تو اندازہ ہوتا ہے کہ مصنف نے اپنی اساس میں سچ لکھا ہے۔ ہر طرف اداسی ہے۔


دنیا میں‌ سب سے زیادہ پڑھی جانے والی دس کتب


ابھی ان کے افسانوں کا سحر اترا نہیں ہوتا کہ دوسرے حصے میں موجود مختصر کہانیوں کی باری آجاتی ہے۔ جمیل کم سے کم الفاظ میں بات کہنے کا ہنر رکھتے ہیں۔ کوئی پیغام دینا ہو، کسی اہم مسئلے پر توجہ دلانی ہو یا کوئی درد ناک خبر سنانی ہو، مصنف سب کچھ چند الفاظ میں کہہ سکتا ہے ۔

یہ کتاب مختصر افسانوں اور کہانیوں پر مشتمل ہے اور دو گھنٹوں کی مستقل توجہ سے ایک ہی نشست میں مکمل پڑھی جاسکتی ہے۔ اور یہی شاید اس کتاب میں پائی جانے والی واحد خامی ہے۔ اس کتاب کو پڑھ کر تشنگی رہ جاتی ہے۔ خیال آتا ہے ایک آدھ افسانہ اور ہوتا۔ چند کہانیاں مزید ہوتیں، تو اچھا ہوتا۔

پاکستان ادب پبلشر کے تحت شایع ہونے والی اس کتاب کے صفحات 120 ہیں۔ کتاب کی قیمت  300 روپے ہے، اسے ڈسٹ کور کے ساتھ اچھا گیٹ اپ کے ساتھ شایع کیا گیا ہے۔


اگاتھا کرسٹی، جس نے شیکسپئر کی مقبولیت کو چیلنج کر دیا تھا


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانےکے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں